Kangan Bele Ka

نظم

کنگن بیلے کا
اس نے میرے ہاتھ میں باندھا

اجلا کنگن بیلے کا
پہلے پیار سے تھامی کلائی

بعد اس کے ہولے ہولے پہنایا
گہنا پھولوں کا
پھر جھک کر ہاتھ کو چوم لیا

پھول تو آخر پھول ہی تھے
مرجھا ہی گئے
لیکن میری راتیں ان کی خوشبو سے اب تک روشن ہیں

بانہوں پر وہ لمس ابھی تک تازہ ہے
شاخ صنوبر پر اک چاند دمکتا ہے
پھول کا گہنا
پریم کا کنگن
پیار کا بندھن
اب تک میری یاد کے ہاتھ سے لپٹا ہوا ہے
Nazam

Kangan Bele Ka

Us ne mere hath mein bandha 

Ujla kangan bele ka 

Pahle pyar se thami kalai 

Baad is ke haule haule pahnaya 

Gahna phulon ka 

Phir jhuk kar hath ko chum liya 

Phul to aalkhir phul hi the 

Murjha hi gae 

Lekin meri raaten un ki khushbu se ab tak raushan hain 

Banhon par wo lams abhi tak taza hai 

Shakh-e-sanobar par ek chand damakta hai 

Phul ka gahna 

Prem ka kangan 

Pyar ka bandhan 

Ab tak meri yaad ke hath se lipta hua hai

اپنا تبصرہ بھیجیں