Mein Apne Aap Se Pechha Chhura Ke

Mein Apne Aap Se Pechha Chhura Ke

Mein Apne Aap Se Pechha Chhura Ke
Nikal jaon kahin rasi tara ke

Qadam aakhir uthana hi pariga
Nahi to gir parun ga dagmaga ke

Kahan hai ab woh mashq aawargi ki
Sanbhal jaon ga lekin lar khara ke

Kisi ke dar peh jane ka nateeja
Mein dekh aaya hoon uss ke dar peh ja ke

Basar ki iss tarah duniya mein goya
Guzari jail mein chakki chala ke

Likhi hai bandangi mein sar bulandi
Milo har aadmi se sar jhuka ke

Kisi ke kam aao zindagi mein
Khushi hogi kisi ke kam aa ke

Mein apne aap se pechha chhura ke
Nikal jaon kahin rasi tara ke
غزل
میں اپنے آپ سے پیچھا چھڑا کے
نکل جاؤں کہیں رسی تڑا کے

قدم آخر اُٹھانا ہی پڑے گا
نہیں تو گر پڑوں گا ڈگمگا کے

کہاں ہے اب وہ مشق آوارگی کی
سنبھل جاؤں گا لیکن لڑ کھڑا کے

کسی کے در پہ جانے کا نتیجہ
میں دیکھ آیا ہوں اُس کے در پہ جا کے

بسر کی اِس طرح دنیا میں گویا
گزاری جیل میں چکی چلا کے

لکھی ہے بندگی میں سربلندی
ملو ہر آدمی سے سر جھکا کے

کسی کے کام آو زندگی میں
خوشی ہوگی کسی کے کام آکے

میں اپنے آپ سے پیچھا چھڑا کے
نکل جاؤں کہیں رسی تڑا کے

اپنا تبصرہ بھیجیں