Waqt Ko Tab Mein Teri Raftaar Kaha Karta Tha

Waqt Ko Tab Mein Teri Raftaar Kaha Karta Tha

Waqt Ko Tab Mein Teri Raftaar Kaha Karta Tha
Jab tere pyaar ko hi pyaar kaha karta tha

Tere hone se samjhta tha keh duniya tum ho
Waise duniya ko mein be kaar kaha karta tha

Tab mein bichare hoye logon pe bhi hans deta tha
Tab mein un ko bhi gunehgaar kaha karta tha

Tum se bichra hoon tou roya hoon wagarna kal tak
Ronne walon ko bhi fankar kaha karta tha

Hum shakal hai ya wohi hai mera dushman dekho
Aise aik shakhs ko mein yar kaha karta tha

Waqt ko tab mein teri raftaar kaha karta tha
Jab tere pyaar ko hi pyaar kaha karta tha
غزل
وقت کو تب میں تیری رفتار کہا کرتا تھا
جب تیرے پیار کو ہی پیار کہا کرتا تھا

تیرے ہونے سے سمجھتا تھا کہ دنیا تم ہو
ویسے دنیا کو میں بے کار کہا کرتا تھا

تب میں بچھڑے ہوئے لوگوں پے بھی ہنس دیتا تھا
تب میں اُن کو بھی گنہگار کہا کرتا تھا

تم سے بچھڑا ہوں تو رویا ہوں وگرنہ کل تک
رونے والوں کو بھی فنکار کہا کرتا تھا

ہم شکل ہے یا وہی ہے میرا دشمن دیکھو
ایسے ایک شخص کو میں یار کہا کرتا تھا

وقت کو تب میں تیری رفتار کہا کرتا تھا
جب تیرے پیار کو ہی پیار کہا کرتا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں