Larazte Sae

نظم:لرزتے سائے
وہ فسانہ جسے تاریکی نے دہرایا ہے
میری آنکھوں نے سنا
میری آنکھوں میں لرزتا ہوا قطرہ جاگا
میری آنکھوں میں لرزتے ہوئے قطرے نے کسی جھیل کی صورت لے لی
جس کے خاموش کنارے پہ کھڑا کوئی جواں
دور جاتی ہوئی دوشیزہ کو
حسرت و یاس کی تصویر بنے تکتا ہے
حسرت و یاس کی تصویر چھناکا سا ہوا
اور پھر حال کے پھیلے ہوئے پردے کے ہر اک سلوٹ پر
یک بیک دامن ماضی کے لرزتے ہوئے سائے ناچے
ماضی و حال کے ناطے جاگے
 Nazam:Larzte sae
wo fasana jise tariki ne dohraya hai
meri aankhon ne suna
 
meri aankhon mein larazta hua qatra jaga
meri aankhon mein larazte hue qatre ne kisi jhil ki surat le li
 
jis ke khamosh kinare pe khada koi jawan
dur jati hui doshiza ko
 
hasrat o yas ki taswir bane takta hai
hasrat o yas ki taswir chhanaka sa hawa
 
aur phir haal ke phaile hue parde ke har ek silwat par
yak-ba-yak daman-e-mazi ke larazte hue sae nache
 
mazi o haal ke nate jage

اپنا تبصرہ بھیجیں