Aaj Bhadki Rag-E-Wahshat Tere Diwanon Ki

شاعر:احسؔان دانش
غزل
آج بھڑکی رگ وحشت ترے دیوانوں کی
قسمتیں جاگنے والی ہیں بیابانوں کی

پھر گھٹاؤں میں ہے نقارۂ وحشت کی صدا
ٹولیاں بندھ کے چلیں دشت کو دیوانوں کی

آج کیا سوجھ رہی ہے ترے دیوانوں کو
دھجیاں ڈھونڈھتے پھرتے ہیں گریبانوں کی

روح مجنوں ابھی بیتاب ہے صحراؤں میں
خاک بے وجہ نہیں اڑتی بیابانوں کی

اس نے احسانؔ کچھ اس ناز سے مڑ کر دیکھا
دل میں تصویر اتر آئی پری خانوں کی

 GHAZAL
Aaj Bhadki Rag-E-Wahshat Tere Diwanon Ki
Qismaten jagne wali hain bayabanon ki

Phir ghataon mein hai naqqara-e-wahshat ki sada
Toliyan bandh ke chalin dasht ko diwanon ki

Aaj kya sujh rahi hai tere diwanon ko
Dhajjiyan dhundhte phirte hain garebanon ki

Ruh-e-majnun abhi betab hai sahraon mein
Khak be-wajh nahin udti bayabanon ki

Us ne ‘ehsan’ kuchh is naz se mud kar dekha
Dil mein taswir utar aai pari-khanon ki

اپنا تبصرہ بھیجیں