Koi Sheher Tha Jis Ki Ek Gali Meri Har Aahat Phechanti Thi

غزل
کوئی شہر تھا جس کی اک گلی, میری ہر آہٹ پہچانتی تھی
میرے نام کا اک دروازہ تھا ,اک کھڑکی مجھے جانتی تھی

میرے باپ کی شب بیداریوں پر, کہی فجرے پہرہ دیتی تھی
میرا شعر نہیں سنتا تھا کوئی, میری اماں مجھ کو مانتی تھی

اک بٹوارے کی رنجش نے دونوں کو آگ بنا ڈالا
میری آنکھوں میں بھی خون نہ تھا تیرے چہرے پر بھی شانتی تھی

میں اس بے لوث محبت کا احسان نہیں دے سکتا علیؔ
جو خود کو دھوپ میں جُھلسا کر میرے سر پر چادر تانتی تھی
Ghazal
Koi Sheher Tha Jis Ki Ek Gali Meri Har Aahat Phechanti Thi
Meray naam ka ek darwaza tha ek kharki mujhe janti thi

Meray baap ki shaab badarion per kahi fajray phera deti thi
Mera sher nahi sunta tha koi meri amaa mujh ko manti thi

Ek batwary ki ranjish nay dono ko aag bana dala
Meri aankhon main bhi khoon na tha teray chehray per bhi shanti thi

Main us by-laos mohabbat ka ehsaan nahi dy sakta ali
Jo khud ko dhoop main jhulsaa kar meray sar per chadar tanti thi

اپنا تبصرہ بھیجیں