Khauf Ke Zyada Hijrat Karte Ha| Urdu Ghazal Poetry

Khauf Ke Zyada Hijrat Karte Ha| Urdu Ghazal Poetry

Khauf Ke Zyada Hijrat Karte Hain
Deewaron ke aut mein harkat karte hain

Maa ke hote kitne la parwao thay hum
Ab har borhe pair ki khidmat karte hain

Jane kaisa dar hai inn ke seeno mein
Ba aawaz buland tilwat karte hain

Aur kisi ko milta hai iss ka phal
Hum yeh zehen mein rakh kar mehnat karte hain

Woh har bar hi aisi cheezain karti hai
Jaise pehli bar mohabbat karte hain

Pata nahi woh gehra hai ya mabham hai
Log to uss ki bari wazahat karte hain

Khauf ke zyada hijrat karte hain
Deewaron ke aut mein harkat karte hain
غزل
خوف کے زیادہ ہجرت کرتے ہیں
دیواروں کے اوٹ میں حرکت کرتے ہیں

ماں کے ہوتے کتنے لا پرواں تھے ہم
اب ہر بوڑھے پیڑ کی خدمت کرتے ہیں

جانے کیسا ڈر ہے اِ ن کے سینوں میں
با آواز بلند تلاوت کرتے ہیں

اور کسی کو ملتا ہے اِس کا پھل
ہم یہ ذہن میں رکھ کر محنت کرتے ہیں

وہ ہر بار ہی ایسی چیزیں کرتی ہے
جیسے پہلی بار محبت کرتے ہیں

پتہ نہیں وہ گہرا ہے یا مبہم ہے
لوگ تو اُس کی بڑی وضاحت کرتے ہیں

خوف کے زیادہ ہجرت کرتے ہیں
دیواروں کے اوٹ میں حرکت کرتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں