Khail Dono Ka Chalay Teen Ka Dana Nah Paray

Khail Dono Ka Chalay Teen Ka Dana Nah Paray

Khail Dono Ka Chalay Teen Ka Dana Nah Paray
Seerhiyan aati rahein saanp ka khana nah paray

Dekh mamaar parinday bhi rahein ghar bhi banay
Naqsha aisa ho keh koi pair girana nah paray

Mere hontoon peh kisi lams ki khwahish hai shadeed
Aisa kuch kar mujhe cigarette ko jalana nah paray

Iss talluq se nikalnay ka koi rasta de
Iss pahar peh bhi barood lagana nah paray

Rabt ki khair hai bas teri ana bach jaye
Iss tarah ja keh tujhe loot ke aana na paray

Hijr aisa ho keh chehre peh nazar aa jaye
Zakhm aisa ho keh dikh jaye dikhana nah paray

Khail dono ka chalay teen ka dana nah paray
Seerhiyan aati rahein saanp ka khana nah paray
غزل
کھیل دونوں کا چلے تین کا دانہ نہ پڑے
سیڑھیاں آتی رہیں سانپ کا خانہ نہ پڑے

دیکھ معمار پرندے بھی رہیں گھر بھی بنے
نقشہ ایسا ہو کہ کوئی پیڑ گرانا نہ پڑے

میرے ہونٹوں پہ کسی لمس کی خواہش ہے شدید
ایسا کچھ کر مجھے سگرٹ کو جلانا نہ پڑے

اِس تعلق سے نکلنے کا کوئی راستہ دے
اِس پہاڑ پہ بھی بارود لگانا نہ پڑے

ربط کی خیر ہے بس تیری انا بچ جائے
اِس طرح جا کہ تجھے لوٹ کے آنا نہ پڑے

ہجر ایسا ہو کہ چہرے پہ نظر آ جائے
زخم ایسا ہو کہ دِکھ جائے دِکھانا نہ پڑے

کھیل دونوں کا چلے تین کا دانہ نہ پڑے
سیڑھیاں آتی رہیں سانپ کا خانہ نہ پڑے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں