Kab Pani Girnay Se Khushbo Phooti Hai

Ghazal
Kab Pani Girnay Se Khushbo Phooti Hai
Mitti ko bhi ilm hai keh barish jhooti hai

Ek rishte ko laparwahi le dubi hai
Ek rasi dheli padne per toti hai

Hath milane per bhi us pe khola nahi
Yeh ungali per zakham hai ya angoothi hai

Us ka hunsana na mumkin tha yuon samjho
Cement ki dewar se konpal phooti hai

Nuh se pocho peche rehe jane walon
Kashti chhoti hai keh dunyia chhoti hai

Ham ne un per sher nahi lekhay hain hafi
Ham ne un pedhon ki izzat loti hai

Youn lagta hai dain o dunya chhot gaye
Mujh say teray shehr ki bas kia chhoti hai

Kab Pani Girnae Se Khushbo Phooti Hai
Mitti ko bhi ilm hai keh barish jhooti hai
غزل
کب پانی گرنے سے خوشبو پھوٹی ہے
مٹی کو بھی علم ہے کہ بارش جھوٹی ہے

اک رشتے کو لا پرواہی لے ڈوبی ہے
اک رسی ڈھیلی پڑنے پر ٹوٹی ہے 

ہاتھ ملانے پر بھی اُس پہ کھولا نہیں
یہ انگلی پر زخم ہے یا انگوٹھی ہے

اُس کا ہسنا نا ممکن تھا یوں سمجھو
سیمنٹ کی دیوار سے کونپل پھوٹی ہے 

نوح سے پوچھو پیچھے رہے جانے والوں
کشتی چھٹی ہے کہ دنیا چھٹی ہے 

ہم نے ان پر شعر نہیں لکھے ہیں حافی
ہم نے ان پیڑوں کی عزت لوٹی ہے

یوں لگتا ہے دین و دنیا چھوٹ گئے
مجھ سے تیرے شہر کی بس کیا چھوٹی ہے
Ghazal
Kab Pani Girnay Say Khushbo Phuutii Hai
Mitti ko bhi ilm hai keh barish jhooti hai

Ek rishtay ko laparwi lay dobi hai
Ek rasi dhali pahrany per toti hai

Hath milanay per bhi us pay khola nahi
Yeh ungali per zakham hai ya angoothi hai

Us ka hunsana na mumkin tha youn samjho
Cement ki dewar say konpal photi hai

Noh say pocho pechay rehy janay walon
Kashti choti hai keh dunyia chuti hai

Hun nay un per sher nahi lekhay hain hafi
Hum nay un pedhon ki izzat loti hai

Youn lagta hai dain o dunyia choot gay
Mujh say teray shehr ki bas kia chooti hai

Kab Pani Girnay Say Khushbo Photi Hai
Matti ko bhi ilam hai keh barish jhooti hai
غزل
کب پانی گرنے سے خوشبو پھوٹی ہے
مٹی کو بھی علم ہے کہ بارش جھوٹی ہے
 
اک رشتے کو لا پرواہی لے ڈوبی ہے
اک رسی ڈھیلی پڑنے پر ٹوٹی ہے
 
ہاتھ ملانے پر بھی اُس پہ کھولا نہیں
یہ انگلی پر زخم ہے یا انگوٹھی ہے
 
اُس کا ہسنا نا ممکن تھا یوں سمجھو
سیمنٹ کی دیوار سے کونپل پھوٹی ہے
 
نوح سے پوچھو پیچھے رہے جانے والوں
کشتی چھٹی ہے کہ دنیا چھٹی ہے
 
ہم نے ان پر شعر نہیں لکھے ہیں حافی
ہم نے ان پیڑوں کی عزت لوٹی ہے
یوں لگتا ہے دین و دنیا چھوٹ گئے
مجھ سے تیرے شہر کی بس کیا چھوٹی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں