Jhuk Gai Jab Ye Ana Tere Dar-E-Saffak Par

غزل
جھک گئی جب یہ انا تیرے در‌‌ سفاک پر
مجھ سے مت پوچھو کہ کیا گزری دل بے باک پر
اس زمیں سے آسماں تک میں بکھرتی ہی گئی
اب نہ سمٹی تو گروں گی ایک دن میں چاک پر
میں رہی اک ہجر میں اور ایک اب ملنے کو ہے
جان سے میں یوں گئی تو خاک ڈالو خاک پر 
اب وہاں پھوٹیں گے پھر سے لالہ و گل دیکھنا
ہو رہا ہے خون کا چھڑکاؤ ارض پاک پر 
یہ تری یادوں کے جگنو یا کہ آنسو ہیں مرے
جو ستارے سے چمکتے ہیں مری پوشاک پر 
کیوں دیار غیر میں مرجھا گئے چہروں کے پھول
برف سی گرتی رہی اس دیدۂ نم ناک پر 
جس طرح گزری ہے میری زندگانی کیا کہوں
تو وہاں بیٹھا ہے پھر کس کے لئے افلاک پر
Ghazal
Jhuk Gai Jab Ye Ana Tere Dar-E-Saffak Par
Mujh se mat puchho ki kya guzri dil-e-be-bak par
 
Is zamin se aasman tak main bikharti hi gai
Ab na simti to girungi ek din main chaak par
 
Main rahi ek hijr mein aur ek ab milne ko hai
Jaan se main yun gai to khak dalo khak par
 
Ab wahan phutenge phir se lala-o-gul dekhna
Ho raha hai khun ka chhidkaw arz-e-pak par
 
Ye teri yaadon ke jugnu ya ki aansu hain mere
Jo sitare se chamakte hain meri poshak par
 
Kyun dayar-e-ghair mein murjha gae chehron ke phul
Barf si girti rahi is dida-e-nam-nak par
 
Jis tarah guzri hai meri zindagani kya kahun
Tu wahan baitha hai phir kis ke liye aflak par

اپنا تبصرہ بھیجیں