Ishq Har Chand Massaib Se | Iftikhar Arif Ghazal's

Ishq Har Chand Massaib Se | Ehsan Danish Ghazal’s

Ishq Har Chand Massaib Se Preshan Nah Howa
Nah howa husan magar tabigh farman nah howa

Lakh duniya ne yeh chaha keh pareshan ho magar
Mein tire gham ki hifazat mein pareshan nah howa

Dil ki aawaz ho mehram asar kya maani
Ishq kafir hai agar husan muslman nah howa

Darpay uqda hasti hai azal hi se bashar
Lekin ik khaak ke zarray ka bhi irfan nah howa

Dil mein har khoon ka qatra hai talatum bakinar
Jo magar aankh se tapka wahi toofan nah howa

Tou ho aazad keh be wajah hai mujh se bhi guriaz
Mein woh majboor keh dushman se bhi nalan nah howa

Apni paigham nawai ke nataij mein mujhe
Fikar zindaan tu raha hai gham zindaan nah howa

Jis ke mushrab mein mohabbat ho mohabbat ka jawab
Meri taqdeer mein aisa koi insan nah howa

Aik hi jalwe se ehsan nazar hat nah saki
Mujh se kuch iss ke siwa kaar-e-numaya nah howa

Ishq har chand massaib se pareshan nah howa
Nah howa husan magar tabigh farman nah howa
غزل
عشق ہر چند مصائب سے پریشاں نہ ہوا
نہ ہوا حسن مگر تابع فرماں نہ ہوا

لاکھ دنیا نے یہ چاہا کہ پریشاں ہو مگر
میں ترے غم کی حفاظت میں پریشاں نہ ہوا

دل کی آواز ہو محروم اثر کیا معنی
عشق کافر ہے اگر حسن مسلماں نہ ہوا

درپئے عقدہ ہستی ہے ازل ہی سے بشر
لیکن اک خاک کے ذرے کا بھی عرفاں نہ ہوا

دل میں ہر خون کا قطرہ ہے تلاطم بکنار
جو مگر آنکھ سے ٹپکا وہی طوفاں نہ ہوا

تو ہو آزاد کہ بے وجہ ہے مجھ سے بھی گریز
میں وہ مجبور کہ دشمن سے بھی نالاں نہ ہوا

اپنی پیغام نوائی کے نتائج میں مجھے
فکر زنداں تو رہا ہے غم زنداں نہ ہوا

جس کےمشرب میں محبت ہو محبت کا جواب
میری تقدیر میں ایسا کوئی انساں نہ ہوا

ایک ہی جلوے سے احسان نظر ہٹ نہ سکی
مجھ سے کچھ اس کے سوا کار نمایاں نہ ہوا

عشق ہر چند مصائب سے پریشاں نہ ہوا
نہ ہوا حسن مگر تابع فرماں نہ ہوا

اپنا تبصرہ بھیجیں