Hum To Bachpan Mein Bhi Akele The

ہم تو بچپن میں بھی اکیلے تھے
صرف دل کی گلی میں کھیلے تھے
اک طرف مورچے تھے پلکوں کے
اک طرف آنسوؤں کے ریلے تھے
تھیں سجی حسرتیں دکانوں پر
زندگی کے عجیب میلے تھے
خود کشی کیا دکھوں کا حل بنتی
موت کے اپنے سو جھمیلے تھے
ذہن و دل آج بھوکے مرتے ہیں
ان دنوں ہم نے فاقے جھیلے تھے
Hum To Bachpan Mein Bhi Akele The
sirf dil ki gali mein khele the
 
ek taraf morche the palkon ke
ek taraf aansuon ke rele the
 
thin saji hasraten dukanon par
zindagi ke ajib mele the
 
khud kushi kya dukhon ka hal banti
maut ke apne sau jhamele the
 
zehn o dil aaj bhuke marte hain
un dinon hum ne faqe jhele the

اپنا تبصرہ بھیجیں