Hai Shakal Teri Gulab Jaisi

Hai Shakal Teri Gulab Jaisi

Hai Shakal Teri Gulab Jaisi
Nazar hai teri sharab jaisi

Hawa seher ki hai in dino mein
Badltay mosam ke khawab jaisi

Sada hai ek doorion mein ojhal
Meri sada ke jawab jaisi

Wo din tha dozakh ki aag jaisa
Wo raat gheray azab jaisi

Yeh sheher lagta hai dasht jaisa
Chamak hai es ki sarab jaisi

Munir teri ghazal ajab hai
Kisi safar ki kitab jaisi

Hai shakal teri gulab jaisi
Nazar hai teri sharab jaisi
غزل
ہے شکل تیری گلاب جیسی
نظر ہے تیری شراب جیسی

ہوا سحر کی ہے ان دنوں میں
بدلتے موسم کے خواب جیسی

صدا ہے اک دوریوں میں اوجھل
میری صدا کے جواب جیسی

وہ دن تھا دوزخ کی آگ جیسا
وہ رات گہرے عذاب جیسی

یہ شہر لگتا ہے دشت جیسا
چمک ہے اس کی سراب جیسی

مؔنیر تیری غزل عجب ہے
کسی سفر کی کتاب جیسی

ہے شکل تیری گلاب جیسی
نظر ہے تیری شراب جیسی

اپنا تبصرہ بھیجیں