Garmi-E-Hasrat-E-Nakaam Se Jal Jate Hain

غزل
گرمیٔ حسرت ناکام سے جل جاتے ہیں
ہم چراغوں کی طرح شام سے جل جاتے ہیں
 
شمع جس آگ میں جلتی ہے نمائش کے لیے
ہم اسی آگ میں گمنام سے جل جاتے ہیں
 
بچ نکلتے ہیں اگر آتش سیال سے ہم
شعلۂ عارض گلفام سے جل جاتے ہیں
 
خود نمائی تو نہیں شیوۂ ارباب وفا
جن کو جلنا ہو وہ آرام سے جل جاتے ہیں
 
ربط باہم پہ ہمیں کیا نہ کہیں گے دشمن
آشنا جب ترے پیغام سے جل جاتے ہیں
 
جب بھی آتا ہے مرا نام ترے نام کے ساتھ
جانے کیوں لوگ مرے نام سے جل جاتے ہیں
Ghazal
Garmi-E-Hasrat-E-Nakaam Se Jal Jate Hain
hum charaghon ki tarah sham se jal jate hain
 
shama jis aag mein jalti hai numaish ke liye
hum usi aag mein gumnam se jal jate hain
 
bach nikalte hain agar aatish-e-sayyal se hum
shola-e-ariz-e-gulfam se jal jate hain
 
KHud-numai to nahin shewa-e-arbab-e-wafa
jin ko jalna ho wo aaram se jal jate hain
 
rabt-e-baham pe hamein kya na kahenge dushman
aashna jab tere paigham se jal jate hain
 
jab bhi aata hai mera nam tere nam ke sath
jaane kyun log mere nam se jal jate hain

اپنا تبصرہ بھیجیں