Falak Pe Chand Ke Haale Bhi Sog Karte Hain

غزل
فلک پہ چاند کے ہالے بھی سوگ کرتے ہیں
جو تو نہیں تو اجالے بھی سوگ کرتے ہیں

تمہارے ہاتھ کی چوڑی بھی بین کرتی ہے
ہمارے ہونٹ کے تالے بھی سوگ کرتے ہیں

نگر نگر میں وہ بکھرے ہیں ظلم کے منظر
ہماری روح کے چھالے بھی سوگ کرتے ہیں

اسے کہو کہ ستم میں وہ کچھ کمی کر دے
کہ ظلم توڑنے والے بھی سوگ کرتے ہیں

تم اپنے دکھ پہ اکیلے نہیں ہو افسردہ
تمہارے چاہنے والے بھی سوگ کرتے ہیں

 Ghazal
Falak Pe Chand Ke Haale Bhi Sog Karte Hain
Jo tu nahin to ujale bhi sog karte hain

Tumhaare hath ki chudi bhi bain karti hai
Hamare hont ke tale bhi sog karte hain

Nagar nagar mein wo bikhre hain zulm ke manzar
Hamari ruh ke chhaale bhi sog karte hain

Use kaho ki sitam mein wo kuchh kami kar de
Ki zulm todne wale bhi sog karte hain

Tum apne dukh pe akele nahin ho afsurda
Tumhaare chahne wale bhi sog karte hain

اپنا تبصرہ بھیجیں