Guzishta Shab Yun Laga Keh Andar Se Kat Raha

Guzishta Shab Yun Laga Keh Andar Se Kat Raha

Guzishta Shab Yun Laga Keh Andar Se Kat Raha Hoon
Mein iss aziyat mein saath painsath minute raha hoon

Tou mujh ko ronay de yar shanay peh hath mat rakh
Mein geelay kaghaz ki tarah chhonay se phat raha hoon

Yaqeen kr sakht sard be jan aadmi tha
Galay mila to laga satoon se lipat raha hoon

Woh hijr tha jis ne num kiya aur bal nikalay
Mein jitna seedha hoon iss ka bilkul ulat raha hoon

Suna tha har aik shay hararat se phailti hai
Tujh aag ke pass ho ke mein kyun simt raha hoon

Paros mein pair kat raha hai mein kaan dhanpay
Darkht ke faidon peh mazmoon rat raha hoon

Akhir be kaar shai tha mein kar-e-ishq se qabal
Samjh le sokhay hoye kunwen ka rahet raha hoon

Guzishta shab yun laga keh andar se kat raha hoon
Mein iss aziyat mein saath painsath minute raha hoon
غزل
گزشتہ شب یوں لگا کہ اندر سے کٹ رہا ہوں
میں اِس اذیت میں ساٹھ پینسٹھ منٹ رہا ہوں

تو مجھ کو رونے دے یار شانے پہ ہاتھ مت رکھ
میں گیلے کاغذ کی طرح چھونے سے پھٹ رہا ہوں

یقین کر سخت سرد بے جان آدمی تھا
گلے ملا تو لگا ستوں سے لِپٹ رہا ہوں

وہ ہجر تھا جس نے نم کیا اور بل نکالے
میں جتنا سیدھا ہوں اِس کا بالکل اُلٹ رہا ہوں

سنا تھا ہر ایک شے حرارت سے پھیلتی ہے
تجھ آگ کے پاس ہو کے میں کیوں سمٹ رہا ہوں

پڑوس میں پیڑ کٹ رہا ہے میں کان ڈھانپے
درخت کے فائدوں پہ مضمون رٹ رہا ہوں

اخیر بے کار شے تھا میں کارِ عشق سے قبل
سمجھ لے سوکھے ہوئے کنویں کا رہٹ رہا ہوں

گزشتہ شب یوں لگا کہ اندر سے کٹ رہا ہوں
میں اِس اذیت میں ساٹھ پینسٹھ منٹ رہا ہوں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں