Kia Khazana Tha Ke Chorr Aye Hain

Kia Khazana Tha Ke Chorr Aye Hain

Kia Khazana Tha Ke Chorr Aye Hain Aghyar Ke Paas
Ek basti mein kisi sheher e Khushasar ke paas

Dekhiye khiltay hain kab anfoso afaq ke baid
Ham bhi jate tou hain ek sahib e israr ke paas

Dil ke qeemat pe bhi ek ehad nibaye gaye ham
Umer bhar baithy rahe ek hi diwar ke paas

Halqat e sheher mein mazda ho keh, es ehad mein bhi
Khwab mehfooz hain ek dida e bidaar ke paas

Din nikalta hai tou lagta hai keh jaise suraj
Subah e roshan ki amant tha shaba e tar ke paas

Shaha khubaan jahaan aise bhi ujlat kia hain
Khud ba-khud punche hain gul gosha e dastar ke paas

Kia khazana tha ke chorr aye hain aghyar ke paas
Ek basti mein kisi sheher e Khushasar ke paas
غزل
کیا خزانہ تھا کے چھوڑ آئے ہیں اغیار کے پاس
ایک بستی میں کسی شہرِخوش آثار کے پاس

دیکھئے کھلتے ہیں کب انفسُ افاق کے بید
ہم بھی جاتے تو ہیں اک صاحبِ اصرار کے پاس

دل کی قیمت پے بھی اک عہد نبائےگئے ہم
عمر بھر بیٹھے رہے اک ہی دیوار کے پاس

حلقتِ شہر کو مژدہ ہوا کہ، اس عہد میں بھی
خواب محفوظ ہیں اک دیدہِ بیدار کے پاس

دن نکلتا ہے تو لگتا ہے کہ جیسے سورج
صبح روشن کی امانت تھا شبِ تارکے پاس

شہہ خوبانِ جہاں ایسی بھی عجلت کیا ہیں
خود بخود پہنچے ہیں گل گوشہ اے دستار کے پاس

کیا خزانہ تھا کے چھوڑ آئے ہیں اغیار کے پاس
ایک بستی میں کسی شہرِ خوش آثار کے پاس

اپنا تبصرہ بھیجیں