Yeh Basti Jaani Pehchani Bahut Hai

Yeh Basti Jaani Pehchani Bahut Hai

Yeh Basti Jaani Pehchani Bahut Hai
Yahan wadon ki arzani bahut hai

Shagufta lafz likkhe ja rahe hain
Magar lehjon mein virani bahut hai

Subuk zarifon ke qabu mein nahi lafz
Magar shoq-e-gul afshani bahut hai

Hai bazaron mein pani sar se uncha
Mere ghar mein bhi tughyani bahut hai

Na jaane kab mere sehra mein aye
Wo ek dariya ke tufani bahut hai

Na jaane kab mere aangan mein barse
Wo ek baadal ke nuqsani bahut hai

Yeh basti jaani pehchani bahut hai
Yahan wadon ki arzani bahut hai
غزل
یہ بستی جانی پہچانی بہت ہے
یہاں وعدوں کی ارزانی بہت ہے

شگفتہ لفظ لکھے جا رہے ہیں
مگر لہجوں میں ویرانی بہت ہے

سبک ظرفوں کے قابو میں نہیں لفظ
مگر شوق گل افشانی بہت ہے

ہے بازاروں میں پانی سر سے اونچا
مرے گھر میں بھی طغیانی بہت ہے

نہ جانے کب مرے صحرا میں آئے
وہ اک دریا کہ طوفانی بہت ہے

نہ جانے کب مرے آنگن میں برسے
وہ اک بادل کہ نقصانی بہت ہے

یہ بستی جانی پہچانی بہت ہے
یہاں وعدوں کی ارزانی بہت ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں