Meri Pahli Nazm

میری پہلی نظم
کیا بچے سلجھے ہوتے ہیں
جب گیند سے الجھے ہوتے ہیں
وہ اس لیے مجھ کو بھاتے ہیں
دن بیتے یاد دلاتے ہیں
وہ کتنے حسین بسیرے تھے
جب دور غموں سے ڈیرے تھے
جو کھیل میں حائل ہوتا تھا
نفرین کے قابل ہوتا تھا
ہر اک سے الجھ کر رہ جانا
رک رک کے بہت کچھ کہہ جانا
ہنس دینا باتوں باتوں پر
برسات کی کالی راتوں پر
بادل کی سبک رفتاری پر
بلبل کی آہ و زاری پر
اور شمع کی لو کی گرمی پر
پروانوں کی ہٹ دھرمی پر
دنیا کے دھندے کیا جانیں
آزاد یہ پھندے کیا جانیں
معصوم فضا میں رہتے تھے
ہم تو یہ سمجھ ہی بیٹھے تھے
خوشیوں کا الم انجام نہیں
دنیا میں خزاں کا نام نہیں
ماحول نے کھایا پھر پلٹا
ناگاہ تغیر آ جھپٹا
اور اس کی کرم فرمائی سے
حالات کی اک انگڑائی سے
آ پہنچے ایسے بیڑوں میں
جو لے گئے ہمیں تھپیڑوں میں
بچپن کے سہانے سائے تھے
سائے میں ذرا سستائے تھے
وہ دور مقدس بیت گیا
یہ وقت ہی بازی جیت گیا
اب ویسے مرے حالات نہیں
وہ چیز نہیں وہ بات نہیں
جینے کا سفر اب دوبھر ہے
ہر گام پہ سو سو ٹھوکر ہے
وہ دل جو روح قرینہ تھا
آشاؤں کا ایک خزینہ تھا
اس دل میں نہاں اب نالے ہیں
تاروں سے زیادہ چھالے ہیں
جو ہنسنا ہنسانا ہوتا ہے
رونے کو چھپانا ہوتا ہے
کوئی غنچہ دل میں کھلتا ہے
تھوڑا سا سکوں جب ملتا ہے
غم تیز قدم پھر بھرتا ہے
خوشیوں کا تعاقب کرتا ہے
میں سوچتا رہتا ہوں یوں ہی
آخر یہ تفاوت کیا معنی
یہ سوچ عجب تڑپاتی ہے
آنکھوں میں نمی بھر جاتی ہے
پھر مجھ سے دل یہ کہتا ہے
ماضی کو تو روتا رہتا ہے
کچھ آہیں دبی سی رہنے دے
کچھ آنسو باقی رہنے دے
یہ حال بھی ماضی ہونا ہے
اس پر بھی تجھے کچھ رونا ہے
Meri Pahli Nazm
Kya Bachche Suljhe Hote Hain
jab gend se uljhe hote hain
wo is liye mujh ko bhate hain
din bite yaad dilate hain
wo kitne hasin basere the
jab dur ghamon se dere the
jo khel mein hail hota tha
nafrin ke qabil hota tha
har ek se ulajh kar rah jaana
ruk ruk ke bahut kuchh kah jaana
hans dena baaton baaton par
barsat ki kali raaton par
baadal ki subuk-raftari par
bulbul ki aah-o-zari par
aur shama ki lau ki garmi par
parwanon ki hat-dharmi par
duniya ke dhande kya jaanen
aazad ye phande kya jaanen
masum faza mein rahte the
hum to ye samajh hi baiThe the
khushiyon ka alam anjam nahin
duniya mein khizan ka nam nahin
mahaul ne khaya phir palta
nagah taghayyur aa jhapta
aur us ki karam-farmai se
haalat ki ek angdai se
aa pahunche aise bedon mein
jo le gae hamein thapedon mein
bachpan ke suhane sae the
sae mein zara sustae the
wo daur-e-muqaddas bit gaya
ye waqt hi bazi jit gaya
ab waise mere haalat nahin
wo chiz nahin wo baat nahin
jine ka safar ab dubhar hai
har gam pe sau sau thokar hai
wo dil jo ruh-e-qarina tha
aashaon ka ek khazina tha
is dil mein nihan ab nale hain
taron se ziyaada chhaale hain
jo hansna hansana hota hai
rone ko chhupana hota hai
koi ghuncha dil mein khilta hai
thoda sa sukun jab milta hai
gham tez qadam phir bharta hai
khushiyon ka taaqub karta hai
main sochta rahta hun yunhi
aakhir ye tafawut kya mani
ye soch ajab tadpati hai
aaankhon mein nami bhar jati hai
phir mujh se dil ye kahta hai
mazi ko tu rota rahta hai
kuchh aahen dabi si rahne de
kuchh aansu baqi rahne de
ye haal bhi mazi hona hai
is par bhi tujhe kuchh rona hai

اپنا تبصرہ بھیجیں