Barson Ki Rasmo Raha The ek Roaz Us Ne Toar Di

Ghazal
Barson Ki Rasmo Raha The ek Roaz Us Ne Toar Di
Hosheyar hum bhi kam nahi umeed hum ne choor di
 
Girhain pari hain jis tarha yeh baat hai kuch is tarha
Wo door toti bar haa har bar hum ne jor di
 
Us ne kaha kaise ho tum bas main ne lab kholay hi thay
Aur baat dunya ki taraf bhout jaldi us ne mor di
 
Wo chahta hai sab kahain sarkar jo be aieb hai
Jo dekh pay aieb ko har aankh us ne phor di
 
Barso hi rasmo raha the ek roaz us ne toar di
Hosheyar hum bhi kam nahi umeed hum ne choor di
غزل
برسوں کی رسموں راہ تھی اک روز اُس نے توڑ دی
ہوشیار ہم بھی کم نہیں امید ہم نے چھوڑ دی
 
گرہیں پڑی ہیں جس طرح یہ بات ہے کچھ اس طرح
وہ ڈور ٹوٹی بار ہا ہر بار ہم نے جوڑ دی
 
اُس نے کہا کیسے ہو تم بس میں نے لب کھولے ہی تھے
اور بات دنیا کی طرف بہت جلدی اُس نے موڑ دی
 
وہ چاہتا سب کہیں سرکار جو بے عیب ہے
جو دیکھ پائے عیب کو ہر آنکھ اُس نے پھوڑ دی
 
برسوں کی رسموں راہ تھی ایک روز اُس نے توڑ دی
ہوشیار ہم بھی کم نہیں امید ہم نے چھوڑ دی

اپنا تبصرہ بھیجیں