AyeShahr Rasan Basta| Iftikhar Arif Nazam

Aye Shahr Rasan Basta| Iftikhar Arif Nazam

Aye Shahr Rasan Basta
Kya yeh teri manzil hai

Kya yeh tira hasel hai
Yeh kon sa manzar hai

Kuch bhi tou nahi khulta
Kya tera muqaddar hai

Taqdeer faseel shahr kotbaa hai keh guldasta
Aye shahr rasan basta
Ab koi bhi khwabon par iman nahi rakhta

Kis rah peh jana hai kis rah nahi jana pehchan nahi rakhta
Shair ho keh soorat gar baghon ki
Chiragho ki basti ke sajane ka saman nahi rakhta

Jis simt nazar kaije ankhon mein dar aate hain aur khoon rulate hain
Yadon se bhare daman lashon se bhara rasta
Aye shahr rasan basta

Muddat hoi logon ko chup mar gayi jaisay
Thokrai hoi khalqat jene ki kashakash mein ji har hai

Jaisay har saans khajal thehri be kar gai jaisay
Ab gham ki hakayat ho ya lutf ki batain hoon

 

koi bhi nahi rota koi bhi nahi hansta
Aye shahr rasan basta

نظم
اے شہر رسن بستہ
کیا یہ تری منزل ہے

کیا یہ ترا حاصل ہے
یہ کون سا منظر ہے

کچھ بھی تو نہیں کھلتا
کیا تیرا مقدر ہے
تقدیر فصیل شہر کتبہ ہے کہ گلدستہ
اے شہر رسن بستہ

اب کوئی بھی خوابوں پر ایمان نہیں رکھتا
کس راہ پہ جانا ہے کس راہ نہیں جانا پہچان نہیں رکھتا
شاعر ہو کہ صورت گر باغوں کی چراغوں کی بستی کے

سجانے کا سامان نہیں رکھتا
جس سمت نظر کیجے آنکھوں میں در آتے ہیں اور خون رلاتے ہیں
یادوں سے بھرے دامن لاشوں سے بھرا رستہ
اے شہر رسن بستہ

مدت ہوئی لوگوں کو چپ مار گئی جیسے
ٹھکرائی ہوئی خلقت جینے کی کشاکش میں جی ہار گئی

جیسے ہر سانس خجل ٹھہری بے کار گئی جیسے
اب غم کی حکایت ہو یا لطف کی باتیں ہوں کوئی بھی نہیں
روتا کوئی بھی نہیں ہنستا
اے شہر رسن بستہ

اپنا تبصرہ بھیجیں