Tumhari Yaad Sy har Pal Saja Huwa Campus

نظم
تمہاری یاد سے ہر پل سجا ہوا کیمپس
میں کیا کرو کہ بھلا ہی نہیں سکا کیمپس

اُداس نہر میں تو پاؤں ڈالے رکھتی تھی
تمہارے بعد اُداسی میں ڈھل گیا کیمپس

نہ جانے کون یہاں اُسکا کھو گیا ہو گا
کسی کی آخری سانس میں تھی دعا کیمپس

جو میں نے ہیلے کی سڑکوں پے تم کو یاد کیا
تمیہں خبر ہے مرے ساتھ رو پڑا کیمپس

کسی نے تجھ میں گزارے ہیں اتنے سال یہاں
سو میں رہوں نہ رہوں تو سدا کیمپس

ہر اک ڈیپارٹمنٹ سے اُس کہ قیہقے گونجے
میں اس کے بعد ”وصی” جب کبھی گیا کیمپس

Nazam
Tumhari Yaad Sy har Pal Saja Huwa Campus
Main Kiya Karon Keh Bhoola Hi Nahi Saka Campus

Udaas Nehar Main Tum Paon Dalay Rakhti Thiin
Tumharay Baad Udaasi mein Dhal Gaya Campus

Na Jaanay Kaun Yahan Uska Kho Gaya Hoga
Kissi Ki Akhiri Saanson Main Thi Dua , Campus

Jo Mayn Ne Hailay Ki Sarkon Pe Tum Ko Yaad Kiya
Tumhain Khabar Hay Mery Sath Ro Para Campus

Kissi Ne Tujh mein Guzaray hain Itny Saal Yahan
So Main Rahoon Na Rahoon Tu Sada Campus

Har Ek Department Sy Uss Keh Qehqahay Goonjay
Main Iss Keh Baad Wassi Jab Kabhi Gaya Campus

اپنا تبصرہ بھیجیں