Ahl-E-Muhabbat Ki Majbori Barhti Jati Hai

Ahl-E-Muhabbat Ki Majbori Barhti Jati Hai

Ahl-E-Muhabbat Ki Majbori Barhti Jati Hai
Mitti se ghulab ki doori barti jati hai

Mehrabon se mahal sara tak dheron dher chiragh
Jalte jate hain be noori barhti jati hai

Karobar mein ab ke khasara aur tarha ka hai
Kaam nahi barhta mazdoori barhti jati hai

Jaise jaise jism tashfi pata jata hai
Waise wasie qalb se doori barhti jati hai

Girya-e-nem shabi ki nimaat jab se bahal hoi
Har lahza ummeed hazori barhti jati hai

Ahl-e-muhabbat ki majbori barhti jati hai
Mitti se ghulab ki doori barti jati hai
غزل
اہل محبت کی مجبوری بڑھتی جاتی ہے
مٹی سے گلاب دوری کی بڑھتی جاتی ہے

محرابوں سے محل سرا تک ڈھیروں ڈھیر چراغ
جلتے جاتے ہیں بے نوری بڑھتی جاتی ہے

کاروبار میں اب کے خسارہ اور طرح کا ہے
کام نہیں بڑھتا مزدوری بڑھتی جاتی ہے

جیسے جیسے جسم تشفی پاتا جاتا ہے
ویسےویسے قلب سے دوری بڑھتی جاتی ہے

گریہ نیم شبی کی نعمت جب سے بحال ہوئی
ہر لحظہ امید حضوری بڑھتی جاتی ہے

اہل محبت کی مجبوری بڑھتی جاتی ہے
مٹی سے گلاب دوری کی بڑھتی جاتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں