Mil Mil Ke Doston Ne Woh Di| Best Ghazal

Mil Mil Ke Doston Ne Woh Di| Best Ghazal

Mil Mil Ke Doston Ne Woh Di Hai Dagha Mujhe
Ab khud peh bhi nahi hai gumaan wafa mujhe

Uff ibidaye shoq ki masoom justajoo
Har phool tha chaman mein tira naqash pa mujhe

A khenchne wale dekh meri be panahiyan
Aayi hai dushmano se bhi haway wafa mujhe

Duniya tumhein azeez hai mere siwa magar
Alam hai napasand tumhare siwa mujhe

Karti nahi uboor tumhein meri justajoo
Kya kar diya hai tum ne yeh kya ho geya mujhe

Wazaa bhi hans para hoon tou phir dil se muddatu
Aayi karahne ki sadaa par sadaa mujhe

Phir baat baat mein hai lachak-ul-tafat ki
Kya phir dikhawo gay koi khwab wafa mujhe

Yeh hai fughan ka zoor tou phir woh chuka qafas
Kardegi meri shola nawayi raha mujhe

Kotahi nazar se ihata nah ho saka
Milne ko youn mila hai boton mein khuda mujhe

 Meri wafa peh aap hi chin bar jabin nahi
khud bhi suchta hoon yeh kya hogya mujhe

Jis madaaye shoq ki daryaft hai huzur
Mayoos kar raha hai wohi maada mujhe

Ik zeeq ik azaab ik andwah ik tarap
Tum ne yeh dil ke naam se kya de diya mujhe

Un ko gonwa ke haal raha hai yeh muddatun
Aaya khayal bhi tou bara gham howa mujhe

Aflaas ke shabab muqqadas mein barha
Aaya hai puchne mire ghar par khuda mujhe

Ehsan apne waqt peh mout aayegi magar
Jeene ka mashwarah nahi deti fizza mujhe

Mil mil ke doston ne woh di hai dagha mujhe
Ab khud peh bhi nahi hai gumaan wafa mujhe
غزل
مل مل کے دوستوں نے وہ دی ہے دغا مجھے
اب خود پہ بھی نہیں ہے گمان وفا مجھے

اُف ابتدائے شوق کی معصوم جستجو
ہر پھول تھا چمن میں ترا نقش پا مجھے

اے کھنچنے والے دیکھ میری بے پناہیاں
آئی ہے دشمنوں سے بھی ہوائے وفا مجھے

دنیا تمہیں عزیز ہے میرے سوا مگر
عالم ہے ناپسند تمہارے سوا مجھے

کرتی نہیں عبور تمہیں میری جستجو
کیا کر دیا ہے تم نے یہ کیا ہوگیا مجھے

وضعاََ بھی ہنس پڑا ہوں تو پھر دل سے مدتوں
آئی کراہنے کی صدا پر صدا مجھے

پھر بات بات میں ہے لچک التفات کی
کیا پھر دکھاؤ گے کوئی خواب وفا مجھے

یہ ہے فغاں کا زور تو پھر وہ چکا قفس
کردے گی میری شعلہ نوائی رہا مجھے

کوتاہی نظر سے احاطہ نہ ہو سکا
ملنے کو یوں ملا ہے بتوں میں خدا مجھے

میری وفا پہ آپ ہی چیں بر جبیں نہیں
میں خود بھی سوچتا ہوں یہ کیا ہوگیا مجھے

جس مدعائے شوق کی دریافت ہیں حضور
مایوس کر رہا ہے وہی مدعا مجھے

اک ضیق اک عذاب اک اندوہ اک تڑپ
تم نے یہ دل کےنام سے کیا دے دیا مجھے

اُن کو گنوا کے حال رہا ہے یہ مدتوں
آیا خیال بھی تو بڑا غم ہوا مجھے

افلاس کے شباب مقدس میں بارہا
آیا ہے پوچھنے مرے گھر پر خدا مجھے

احسان اپنے وقت پہ موت آئے گی مگر
جینے کا مشورہ نہیں دیتی فضا مجھے

مل مل کے دوستوں نے وہ دی ہے دغا مجھے
اب خود پہ بھی نہیں ہے گمان وفا مجھے
Read more click here

اپنا تبصرہ بھیجیں