Agarchay Aaina Dil Mein Hai Qiyam Uska

Agarchay Aaina Dil Mein Hai Qiyam Uska

Agarchay Aaina Dil Mein Hai Qiyam Uska
Nah koi shakal hai iss ki nah koi naam uska

Wohi khuda kabhi milwaye ga hamein uss se
Jo intezar karata hai subah-o-sham uska

Hamare saath nahi ja saka tha woh lekin
Raha khayal siyahat mein gaam gaam uska

Khuda ko pyaar hai apne har aik bande se
Sufaid fam hai iss ka siyah fam uska

Kama ke dete hain jo mal woh ameeron ko
Hisab kyun nahi lete kabhi awam uss ka

Hamara farz hai be lag raye ka izhar
Koi durust kahe ya ghalat yeh kaam uska

Kahan hai sheikh ko sudh budh mazeed peene ki
Nasha utar gaye teen char jaam uska

Zuban dil se koi shayari sonata hai
Tou sameen bhulate nahi kalam uss ka

Shaoor sab se alag bethta hai mehfil mein
Usi se aap samjh lejiye maqam uska

Agarchay aaina dil mein hai qiyam uska
Nah koi shakal hai iss ki nah koi naam uska
غزل
اگرچہ آئنہ دل میں ہے قیام اُس کا
نہ کوئی شکل ہے اِس کی نہ کوئی نام اُس کا

وہی خدا کبھی ملوائے گا ہمیں اُس سے
جو انتظار کراتا ہے صبح و شام اُس کا

ہمارے ساتھ نہیں جا سکا تھا وہ لیکن
رہا خیال سیاحت میں گام گام اُس کا

خدا کو پیار ہے اپنے ہر ایک بندے سے
سفید فام ہے اِس کا سیاہ فام اُس کا

کما کے دیتے ہیں جو مال وہ امیروں کو
حساب کیوں نہیں لیتے کبھی عوام اُس کا

ہمارا فرض ہے بے لاگ رائے کا اظہار
کوئی درست کہے یا غلط یہ کام اُس کا

کہاں ہے شیخ کو سدھ بدھ مزید پینے کی
نشہ اُتار گئے تین چار جام اُس کا

زبان دل سے کوئی شاعری سناتا ہے
تو سامعین بھلاتے نہیں کلام اُس کا

شعور سب سے الگ بیٹھتا ہے محفل میں
اُسی سے آپ سمجھ لیجئے مقام اُس کا

اگرچہ آئنہ دل میں ہے قیام اُس کا
نہ کوئی شکل ہے اِس کی نہ کوئی نام اُس کا

اپنا تبصرہ بھیجیں