Ab Aur Kya Kisi Se Marasim Badhaen Hum

غزل 
اب اور کیا کسی سے مراسم بڑھائیں ہم
یہ بھی بہت ہے تجھ کو اگر بھول جائیں ہم

صحرائے زندگی میں کوئی دوسرا نہ تھا
سنتے رہے ہیں آپ ہی اپنی صدائیں ہم

اس زندگی میں اتنی فراغت کسے نصیب
اتنا نہ یاد آ کہ تجھے بھول جائیں ہم

تو اتنی دل زدہ تو نہ تھی اے شب فراق
آ تیرے راستے میں ستارے لٹائیں ہم

وہ لوگ اب کہاں ہیں جو کہتے تھے کل فرازؔ
ہے ہے خدا نہ کردہ تجھے بھی رلائیں ہم
Ghazal
Ab Aur Kya Kisi Se Marasim Badhaen Hum
Ye bhi bahut hai tujh ko agar bhul jaen hum
 
Sahra-e-zindagi mein koi dusra na tha
Sunte rahe hain aap hi apni sadaen hum
 
Is zindagi mein itni faraghat kise nasib
Itna na yaad aa ki tujhe bhul jaen hum
 
Tu itni dil zada to na thi ai shab-e-firaq
Aa tere raste mein sitare luTaen hum
 
Wo log ab kahan hain jo kahte the kal ‘faraaz’
He he KHuda-na-karda tujhe bhi rulaen hum

اپنا تبصرہ بھیجیں