Aakhri Sach

آخری سچ :
چہرے تمام دھندلے نظر آ رہے ہیں کیوں
کیوں خواب رتجگوں کی حویلی میں دب گئے
ہے کل کی بات انگلی پکڑ کر کسی کی میں
میلے میں گھومتا تھا کھلونوں کے واسطے
جتنے ورق لکھے تھے مری زندگی نے سب
آندھی کے ایک جھونکے میں بکھرے ہوئے ہیں سب
میں چاہتا ہوں پھر سے سمیٹوں یہ زندگی
بچے تمام پاس کھڑے ہیں بجھے بجھے
شوخی نہ جانے کیا ہوئی رنگت کہاں گئی
جیسے کتاب چھوڑ کے جاتے ہوئے ورق
جیسے کہ بھولنے لگے بچہ کوئی سبق
جیسے جبیں کو چھونے لگے موت کا عرق
جیسے چراغ نیند کی آغوش کی طرف
بڑھنے لگے اندھیرے کی زلفیں بکھیر کر
بھولے ہوئے ہیں ہونٹ ہنسی کا پتہ تلک
دروازہ دل کا بند ہوا چاہتا ہے اب
کیا سوچنا کہ پھول سے بچوں کا ساتھ ہے
اب میں ہوں اسپتال کا بستر ہے رات ہے
 :Aakhri Sach
chehre tamam dhundle nazar aa rahe hain kyun
kyun khwab ratjagon ki haweli mein dab gae
 
hai kal ki baat ungli pakad kar kisi ki main
mele main ghumta tha khilaunon ke waste
 
jitne waraq likhe the meri zindagi ne sab
aandhi ke ek jhonke mein bikhre hue hain sab

main chahta hun phir se sametun ye zindagi
bachche tamam pas khade hain bujhe bujhe

shokhi na jaane kya hui rangat kahan gai
jaise kitab chhod ke jate hue waraq

jaise ki bhulne lage bachcha koi sabaq
jaise jabin ko chhune lage maut ka araq

jaise charagh nind ki aaghosh ki taraf
baDhne lage andhere ki zulfen bikher kar

bhule hue hain hont hansi ka pata talak
darwaza dil ka band hua chahta hai ab

kya sochna ki phul se bachchon ka sath hai
ab main hun aspatal ka bistar hai raat hai

اپنا تبصرہ بھیجیں