Gali Mein Dard Ke Purze Talash Karti Thi

غزل
گلی میں درد کے پرزے تلاش کرتی تھی
مرے خطوط کے ٹکڑے تلاش کرتی تھی
 
کہاں گئی وہ کنواری اداس بی آپا
جو گاؤں گاؤں میں رشتے تلاش کرتی تھی
 
بھلائے کون اذیت پسندیاں اس کی
خوشی کے ڈھیر میں صدمے تلاش کرتی تھی
 
عجیب ہجر پرستی تھی اس کی فطرت میں
شجر کے ٹوٹتے پتے تلاش کرتی تھی
 
قیام کرتی تھی وہ مجھ میں صوفیوں کی طرح
اداس روح کے گوشے تلاش کرتی تھی
 
تمام رات کو پردے ہٹا کے چاند کے ساتھ
جو کھو گئے تھے وہ لمحے تلاش کرتی تھی
 
کچھ اس لیے بھی مرے گھر سے اس کو تھی وحشت
یہاں بھی اپنے ہی پیارے تلاش کرتی تھی
 
گھما پھرا کے جدائی کی بات کرتی تھی
ہمیشہ ہجر کے حربے تلاش کرتی تھی
 
تمام رات وہ زخمہ کے اپنے پوروں کو
مرے وجود کے ریزے تلاش کرتی تھی
 
دعائیں کرتی تھی اجڑے ہوئے مزاروں پر
بڑے عجیب سہارے تلاش کرتی تھی
 
مجھے تو آج بتایا ہے بادلوں نے وصیؔ
وہ لوٹ آنے کے رستے تلاش کرتی تھی
Ghazal
Gali Mein Dard Ke Purze Talash Karti Thi
Mere khutut ke tukde talash karti thi
 
Kahan gai wo kunwari udas bi-apa
Jo ganw ganw mein rishte talash karti thi
 
Bhulae kaun aziyyat-pasandiyan us ki
Khushi ke dher mein sadme talash karti thi
 
Ajib hijr-parasti thi us ki fitrat mein
Shajar ke tutte patte talash karti thi
 
Qayam karti thi wo mujh mein sufiyon ki tarah
Udas ruh ke goshe talash karti thi
 
Tamam raat ko parde hata ke chand ke sath
Jo kho gae the wo lamhe talash karti thi
 
Kuchh is liye bhi mere ghar se us ko thi wahshat
Yahan bhi apne hi pyare talash karti thi
 
Ghuma-phira ke judai ki baat karti thi
Hamesha hijr ke harbe talash karti thi
 
Tamam raat wo zakhma ke apne poron ko
Mere wajud ke reze talash karti thi
 
Duaen karti thi ujde hue mazaron par
Bade ajib sahaare talash karti thi
 
Mujhe to aaj bataya hai baadalon ne ‘wasi
Wo laut aane ke raste talash karti thi

اپنا تبصرہ بھیجیں