Zara Si Baat، Zindagi Ke Maile Mein

نظم:ذرا سی بات
زندگی کے میلے میں خواہشوں کے ریلے میں
تم سے کیا کہیں جاناں اس قدر جھمیلے میں
وقت کی روانی ہے بخت کی گرانی ہے
سخت بے زمینی ہے سخت لا مکانی ہے
 
ہجر کے سمندر میں
تخت اور تختے کی ایک ہی کہانی ہے
تم کو جو سنانی ہے
بات گو ذرا سی ہے
 
بات عمر بھر کی ہے
عمر بھر کی باتیں کب دو گھڑی میں ہوتی ہیں
درد کے سمندر میں
ان گنت جزیرے ہیں بے شمار موتی ہیں
 
آنکھ کے دریچے میں تم نے جو سجایا تھا
بات اس دئے کی ہے
بات اس گلے کی ہے
جو لہو کی خلوت میں چور بن کے آتا ہے
 
لفظ کی فصیلوں پر ٹوٹ ٹوٹ جاتا ہے
زندگی سے لمبی ہے بات رت جگے کی ہے
راستے میں کیسے ہو
بات تخلیئے کی ہے
 
تخلیئے کی باتوں میں گفتگو اضافی ہے
پیار کرنے والوں کو اک نگاہ کافی ہے
ہو سکے تو سن جاؤ ایک روز اکیلے میں
تم سے کیا کہیں جاناں اس قدر جھمیلے ہیں
Nazam:Zara Si Baat
Zindagi Ke Maile Mein Khwahishon Ke Rele Mein
Tum Se Kya Kahen Jaanan Is Qadar Jhamele Mein
Waqt Ki Rawani Hai Bakht Ki Girani Hai
Sakht Be-Zamini Hai Sakht La-Makani Hai

Hijr Ke Samundar Mein
Takht Aur Takhte Ki Ek Hi Kahani Hai
Tum Ko Jo Sunani Hai
Baat Go Zara Si Hai

Baat Umr-Bhar Ki Hai
Umr-Bhar Ki Baaten Kab Do-Ghadi Mein Hoti Hain
Dard Ke Samundar Mein
An-Ginat Jazire Hain Be-Shumar Moti Hain

Aankh Ke Dariche Mein Tum Ne Jo Sajaya Tha
Baat Us Diye Ki Hai
Baat Us Gile Ki Hai
Jo Lahu Ki Khalwat Mein Chor Ban Ke Aata Hai

Lafz Ki Fasilon Par Tut Tut Jata Hai
Zindagi Se Lambi Hai Baat Ratjage Ki Hai
Raste Mein Kaise Ho
Baat Takhliye Ki Hai

Takhliye Ki Baaton Mein Guftugu Izafi Hai
Pyar Karne Walon Ko Ek Nigah Kafi Hai
Ho Sake To Sun Jao Ek Roz Akele Mein
Tum Se Kya Kahen Jaanan Is Qadar Jhamele Hain

اپنا تبصرہ بھیجیں