Youn Bhi Iss Raat Mere Pass Same Thora Tha

Youn Bhi Iss Raat Mere Pass Same Thora Tha

Youn Bhi Iss Raat Mere Pass Same Thora Tha
Kaam aisa tha keh jaldi mein nahi hona tha

Jitney pyaase thay kharay dekh rahe thay khali
Mein ne uthwa ke tere sar peh ghara rakha tha

Dosh iss mein tere huliye ka hai logon ka nahi
Pehle pehle tujhe mein ghalat samjha tha

Guftagu baad mein hoti thi tere bare mein
Pehle pistol ko table peh rakha jata tha

Baap ne marte hoye kunji tou aise mujhe di
Jaise lakar mein khazane ka koi naqsha tha

Tum bhi hotay tou yeh sone peh suhaga hota
Inn dino jaib mein jab meri bohat paisa tha

Aur tou kuch nahi iss bat ka dukh hai mujh ko
Mein ne auroon ki tarah tujh ko nahi barta tha

Youn bhi iss raat mere pass same thora tha
Kaam aisa tha keh jaldi mein nahi hona tha
غزل
یوں بھی اس رات میرے پاس سمے تھوڑا تھا
کام ایسا تھا کہ جلدی میں نہیں ہونا تھا

جتنے پیاسے تھے کھڑے دیکھ رہے تھے خالی
میں نے اُٹھوا کے ترے سر پہ گھڑا رکھا تھا

دوش اس میں ترے حلیے کا ہے لوگوں کا نہیں
پہلے پہلے تجھے میں نے بھی غلط سمجھا تھا

گفتگو بعد میں ہوتی تھی ترے بارے میں
پہلے پستول کو ٹیبل پہ رکھا جاتا تھا

باپ نے مرتے ہوئے کنجی تو ایسے مجھے دی
جیسے لاکر میں خزانے کا کوئی نقشہ تھا

تم بھی ہوتے تو یہ سونے پہ سہاگہ ہوتا
ان دنوں جیب میں جب میری بہت پیسہ تھا

اور تو کچھ نہیں اس بات کا دکھ ہے مجھ کو
میں نے اوروں کی طرح تجھ کو نہیں برتا تھا

یوں بھی اس رات میرے پاس سمے تھوڑا تھا
کام ایسا تھا کہ جلدی میں نہیں ہونا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں