Yar Log

نظم:یار لوگ
یوم مزاجی یاروں کی 
سب میری دیکھی بھالی 
 
رات کی تاریکی میں 
ان کی انگارہ سی آنکھیں 
پوری 
دن کو اندھی اور ادھوری 
خالی 
دن کے یہ درویش مگر راتوں کے والی 
 
اپنے محسن کو جب 
دن کے آئینے میں دیکھیں 
فرط ادب سے سمٹیں سکڑیں جھک جائیں 
اور کچلے مسئلے روندے لہجے میں پوچھیں 
کیسا ہے مزاج عالی 
 
رات کو لیکن  
پیار کا رستہ کاٹ کے نکلیں 
جیسے بلی کالی  
ان کی ہے بس ایک نشانی
گالی
Nazam:Yar Log
Yaum-E-Mizaji Yaron Ki 
sab meri dekhi-bhaali 
 
raat ki tariki mein 
un ki angara si aankhen  
puri 
din ko andhi aur adhuri  
khali 
din ke ye darwesh magar raaton ke wali 
 
apne mohsin ko jab 
din ke aaine mein dekhen 
fart-e-adab se simten sikuden jhuk jaen 
aur kuchle masale raunde lahje mein puchhen 
kaisa hai mizaj-e-ali 

raat ko lekin 
pyar ka rasta kaT ke niklen 
jaise billi kali  
in ki hai bas ek nishani 
gali 

اپنا تبصرہ بھیجیں