Wo Taair Jo Kabhi Apne Par- O-Baal Azmana

Wo Taair Jo Kabhi Apne Par- O-Baal Azmana

Wo Taair Jo Kabhi Apne Par- O-Baal Azmana Chahte Thay
Hawaon ke khado khal azamana chahte thay

Ashiyanoon ki tarf jatay howay darnay lagay hain
Kon jane konsa sayaad kaise wazah ke jaal azmana chahata ho

Konse shakhon pe kaise gul khilana chahta ho
Shikari apne batin ki tarha andhe shikari

Hormaton ke mausamon se nabald hain
Aur nishanay mostanad hain

Jagmagati jagti shakhon ko be aawaz rakhna chahte hain
Sitam gari ke sab darbaz rakhna chahtay hain

Khuda-wand tujhe sahay howay baghon ki saugand
Sadaon ke samar ki montazir shakhon ki saugand

Urranun ke liye par tulnay walon pe ek saya tahafooz ki zamant danay wala
Koi mousam bashrat danay wala

Wo taair jo kabhi apne par- o-baal azmana chahte thay
Hawaon ke khado khal azamana chahte thay
نظم
وہ طائر جو کبھی اپنے پروبال آزمانا چاہتے تھے
ہواؤں کے خدوخال آزمانا چاہتے تھے

آشیانوں کی طرف جاتے ہوئے ڈرنے لگے ہیں
کون جانے کون ساصیاد کیسی وضع کے جال آزمانا چاہتا ہو

کون سے شاخوں پہ کیسے گل کھلانا چاہتا ہو
شکاری اپنے باطن کی طرح اندھے شکاری

حرمتوں کے موسموں سے نابلد ہیں
اور نشانے مستند ہیں

جگمگاتی جاگتی شاخوں کو بے آواز رکھنا چاہتے ہیں
ستم گاری کے سب درباز رکھنا چاہتے ہیں

خداوند تجھے سہے ہوئے باغوں کی سوگند
صداؤں کے ثمر کی منتظر شاخوں کی سوگند

اڑانوں کے لیے پر تولنے والوں پہ اک سایہ تحفظ کی ضمانت دینے والا
کوئی موسم بشارت دینے ولا

اپنا تبصرہ بھیجیں