Preeshan Ho Ke Meri Khak Aakhir Dil

پریشاں ہو کے میری خاک آخر دل نہ بن جائے
جو مشکل اب ہے یا رب پھر وہی مشکل نہ بن جائے

نہ کر دیں مجھ کو مجبور نوا فردوس میں حوریں
مرا سوز دروں پھر گرمی محفل نہ بن جائے

کبھی چھوڑی ہوئی منزل بھی یاد آتی ہے راہی کو
کھٹک سی ہے جو سینے میں غم منزل نہ بن جائے

بنایا عشق نے دریائے ناپیدا کراں مجھ کو
یہ میری خود نگہداری مرا ساحل نہ بن جائے

کہیں اس عالم بے رنگ و بو میں بھی طلب میری
وہی افسانۂ دنبالۂ محمل نہ بن جائے

عروج آدم خاکی سے انجم سہمے جاتے ہیں
کہ یہ ٹوٹا ہوا تارا مہ کامل نہ بن جائے

Preeshan Ho Keh Meri Khak Aakhir Dil Na Ban Jay
Jo Mushkil Ab Hai Ya Rabb Phir Wohi Mushkil Na Ban Jay

Na Kar Den Mujh Ko Mujboor.e.Nawa Firdos Mein Hooren
Mera soz.e.Daru Phir Garmi.e.Mehfil Na Ban Jay

Kabhi Chodi Hui Manzil Bhi Yad Ati Hai Rahi Ko
Khatak Si Hai Jo Seene Mein Ghum.e.Manzil Na Ban Jay

Banaya Ishq Ne Dariya .e.Napaida Kran Mujh Ko
Yeh Meri Khud Nigah Daari Mera Sahil Na Ban Jay

Kahi Is Alam Be Rang.o.Bu Mein Bhi Talab Meri
Wohi Afsana.e.Dunbala.e.Mehmal Na Ban Jay

Arooj.e.Adam Khaki Se Anjum Sehmy Jaty Hain
Keh Yeh Toota Hua Tarama Qamil Na Ban Jay

اپنا تبصرہ بھیجیں