Agay Thay Hum Se Rah-E-Adam Mein Nahi Rahe

Agay Thay Hum Se Rah-E-Adam Mein Nahi Rahe

Agay Thay Hum Se Rah-E-Adam Mein Nahi Rahe
Jane woh sab kahan hain jo hum mein nahi rahe

Kuch ho gaye thay teri khushi ke liye fana
Jo reh gaye thay woh, tere gham mein nahi rahe
 
Hum bhi rahe hain dasht-e-sukhan mein kayi baras
Lekin talaash-e-qadam mein nahi rahe
 
Sahra noorid aakay hamara makaan bhi dekh
Hum bhi kisi kharabay se kam mein nahi rahe
 
Jhartay chalay gaye meri palkon ke saray baal
Khushki ke pair khitta-e-num mein nahi rahe
 
Heran kyun ho dekh ke poren mitti hoi
Pehle kabhi tum ahl-e-qalam mein nahi rahe
 
Tum iss dil mein reh nah sakay, pass reh ke bhi
Makki ho aur sehan-e-haram mein nahi rahe
 
Agay thay hum se rah-e-adam mein nahi rahe
Jane woh sab kahan hain jo hum mein nahi rahe
 
غزل
آگے تھے ہم سے راہِ عدم میں ، نہیں رہے
جانے وہ سب کہاں ہیں جو ہم میں نہیں رہے
 
کچھ ہو گئے تھے تیری خوشی کے لئے فنا
جو رہ گئے تھے وہ، ترے غم میں نہیں رہے
 
ہم بھی رہے ہیں دشتِ سخن میں کئی برس
لیکن تلاشِ قدم میں نہیں رہے
 
صحرانورد آکے ہمارا مکاں بھی دیکھ
ہم بھی کسی خرابے سے کم میں نہیں رہے
 
جھڑتے چلے گئے مری پلکوں کے سارے بال
خشکی کے پیڑ خطہِ نم میں نہیں رہے
 
حیران کیوں ہو دیکھ کے پوریں مٹی ہوئی
پہلے کبھی تم اہلِ قلم میں نہیں رہے
 
تم اِس دل میں رہ نہ سکے ، پاس رہ کے بھی
مکی ہو اور صحنِ حرم میں نہیں رہے
 
آگے تھے ہم سے راہِ عدم میں ، نہیں رہے
جانے وہ سب کہاں ہیں جو ہم میں نہیں رہے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں