Rang Juda Aahang Juda Mahkar Juda

غزل
رنگ جدا آہنگ جدا مہکار جدا
پہلے سے اب لگتا ہے گلزار جدا
نغموں کی تخلیق کا موسم بیت گیا
ٹوٹا ساز تو ہو گیا تار سے تار جدا
بے زاری سے اپنا اپنا جام لیے
بیٹھا ہے محفل میں ہر مے خوار جدا
ملا تھا پہلے دروازے سے دروازہ
لیکن اب دیوار سے ہے دیوار جدا
یارو میں تو نکلا ہوں جاں بیچنے کو
تم کوئی اب سوچو کاروبار جدا
سوچتا ہے اک شاعر بھی اک تاجر بھی
لیکن سب کی سوچ کا ہے معیار جدا
کیا لینا اس گرگٹ جیسی دنیا سے
آئے رنگ نظر جس کا ہر بار جدا
اپنا تو ہے ظاہر و باطن ایک مگر
یاروں کی گفتار جدا کردار جدا
مل جاتا ہے موقعہ خونی لہروں کو
ہاتھوں سے جب ہوتے ہیں پتوار جدا
کس نے دیا ہے سدا کسی کا ساتھ قتیلؔ
ہو جانا ہے سب کو آخر کار جدا
Ghazal
Rang Juda Aahang Juda Mahkar Juda
Pahle se ab lagta hai gulzar juda
Naghmon ki takhliq ka mausam bit gaya
Tuta saz to ho gaya tar se tar juda
Be-zari se apna apna jam liye
Baitha hai mahfil mein har mai-khwar juda
Mila tha pahle darwaze se darwaza
Lekin ab diwar se hai diwar juda
Yaro main to nikla hun jaan bechne ko
Tum koi ab socho karobar juda
Sochta hai ek shair bhi ek tajir bhi
Lekin sab ki soch ka hai mear juda
Kya lena is girgit jaisi duniya se
Aae rang nazar jis ka har bar juda
Apna to hai zahir-o-baatin ek magar
Yaron ki guftar juda kirdar juda
Mil jata hai mauqa khuni lahron ko
Hathon se jab hote hain patwar juda
Kis ne diya hai sada kisi ka sath ‘qatil’
Ho jaana hai sab ko aakhir-kar juda

اپنا تبصرہ بھیجیں