Wo Furaat Ke Sahil Par Hoon Ya Kisi

Wo Furaat Ke Sahil Par Hoon Ya Kisi

Wo Furaat Ke Sahil Par Hoon Ya Kisi Aur Kinaray Par
Saray Lashkar aik tarha ke hotay hain

Saray khanjar aik tarah ke hutay hain
Ghoron ki tapon mian rondi hoi roshni
Darya say maqtal tak phaili hoi roshni

Saray manzar aik tarah ke hotay hain
Aise har manzar kay baad ek sannata cha jata hai

Yeh sannata tabl-o-ilm ki dihshat ko khaa jata hai
Sannata faryad ki le hai ehtijaj ka lehja hai

Yeh koi aaj ki bat nahi hai bahut purana qissa hai
Har qissay mein sabar ke tewar aik tarah ke hote hain

Wo furaat ke sahil par hoon ya kisi aur kinaray par
Saray Lashkar aik tarah ke hote hain
نظم
وہ فرات کے ساحل پر ہوں یا کسی اور کنارے پر
سارے لشکر ایک طرح کے ہوتے ہیں
سارے خنجر ایک طرح کے ہوتے ہیں

گھوڑوں کی ٹاپوں میں روندی ہوئی روشنی
دریا سے مقتل تک پھیلی ہوئی روشنی

سارے منظر ایک طرح کے ہوتے ہیں
ایسے ہر منظر کے بعد اک سناٹا چھا جاتاہے

یہ سناٹا طبل و علم کی دہشت کو کھا جاتاہے
سناٹا فریاد کی لے ہے احتجاج کا لہجہ ہے

یہ کوئی آج کی بات نہیں ہے بہت پرانا قصہ ہے
ہر قصے میں صبر کے تیور ایک طرح کے ہوتے ہیں

وہ فرات کے ساحل پر ہوں یا کسی اور کنارے پر
سارے لشکر ایک طرح کے ہوتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں