Wahan Weham-O-Guman Ho Jayega Kya

Wahan Weham-O-Guman Ho Jayega Kya

Wahan Weham-O-Guman Ho Jayega Kya
Yahan sab kuch dhuwan ho jayega kya

Sitare dhool aur matti banenge
Samandar aasman ho jayega kya

Tumahara ishq tou la hasili hai
Yeh gham bhi raigaan ho jayega kya

Youn sar par hath rakh kar chal rahe ho
Tou iss se saibaan ho jayega kya

Yeh mera ikhtitam zindagi bhi
Kahin peh darmiyan ho jayega kya

Kisi ka dukh samjhta hi nahi jo
Zamana meharban ho jayega kya

Bohat kuch hai yahan kehne ke laiq
Magar sab kuch bayan ho jayega kya

Haan aadam ki nishani hai yeh insan
Magar yeh be nishaan ho jayega kya

Mujhe marna tou hai ik rooz danish
Magar yeh na gahan ho jayega kya

Wahan weham-o-guman ho jayega kya
Yahan sab kuch dhuwan ho jayega kya
غزل
جہاں وہم وگمان ہو جائے گا کیا
یہاں سب کچھ دھواں ہو جائے گا کیا

ستارے دھول اور مٹی بنیں گے
سمندر آسمان ہو جائے گا کیا

تمہارا عشق تو لا حاصلی ہے
یہ غم بھی رائگاں ہو جائے گا کیا

یوں سر پر ہاتھ رکھ کر چل رہے ہو
تو اس سے سائباں ہو جائے گا کیا

یہ میرا اختتام زندگی بھی
کہیں پہ درمیاں ہو جائے گا کیا

کسی کا دکھ سمجھتا ہی نہیں جو
زمانہ مہرباں ہو جائے گا کیا

بہت کچھ ہے یہاں کہنے کے لائق
مگر سب کچھ بیاں ہو جائے گا کیا

ہاں آدم کی نشانی ہے یہ انسان
مگر یہ بے نشاں ہو جائے گا کیا

مجھے مرنا تو ہے اک روز دانش
مگر یہ ناگہاں ہو جائے گا کیا

جہاں وہم وگمان ہو جائے گا کیا
یہاں سب کچھ دھواں ہو جائے گا کیا

اپنا تبصرہ بھیجیں