Umr Guzregi Imtihan Mein Kya

عمر گزرے گی امتحان میں کیا
داغ ہی دیں گے مجھ کو دان میں کیا
میری ہر بات بے اثر ہی رہی
نقص ہے کچھ مرے بیان میں کیا
مجھ کو تو کوئی ٹوکتا بھی نہیں
یہی ہوتا ہے خاندان میں کیا
اپنی محرومیاں چھپاتے ہیں
ہم غریبوں کی آن بان میں کیا
خود کو جانا جدا زمانے سے
آ گیا تھا مرے گمان میں کیا
شام ہی سے دکان دید ہے بند
نہیں نقصان تک دکان میں کیا
اے مرے صبح و شام دل کی شفق
تو نہاتی ہے اب بھی بان میں کیا
بولتے کیوں نہیں مرے حق میں
آبلے پڑ گئے زبان میں کیا
خامشی کہہ رہی ہے کان میں کیا
آ رہا ہے مرے گمان میں کیا
دل کہ آتے ہیں جس کو دھیان بہت
خود بھی آتا ہے اپنے دھیان میں کیا
وہ ملے تو یہ پوچھنا ہے مجھے
اب بھی ہوں میں تری امان میں کیا
یوں جو تکتا ہے آسمان کو تو
کوئی رہتا ہے آسمان میں کیا
ہے نسیم بہار گرد آلود
خاک اڑتی ہے اس مکان میں کیا
یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا
ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا
Umr Guzre Gi Imtihan Mein Kya
dagh hi denge mujh ko dan mein kya
 
meri har baat be-asar hi rahi
naqs hai kuchh mere bayan mein kya
 
mujh ko to koi tokta bhi nahin
yahi hota hai khandan mein kya
 
apni mahrumiyan chhupate hain
hum gharibon ki aan-ban mein kya
 
khud ko jaana juda zamane se
aa gaya tha mere guman mein kya
 
sham hi se dukan-e-did hai band
nahin nuqsan tak dukan mein kya
 
ai mere subh-o-sham-e-dil ki shafaq
tu nahati hai ab bhi ban mein kya
 
bolte kyun nahin mere haq mein
aable pad gae zaban mein kya
 
khamushi kah rahi hai kan mein kya
aa raha hai mere guman mein kya
 
dil ki aate hain jis ko dhyan bahut
khud bhi aata hai apne dhyan mein kya
 
wo mile to ye puchhna hai mujhe
ab bhi hun main teri aman mein kya
 
yun jo takta hai aasman ko tu
koi rahta hai aasman mein kya
 
hai nasim-e-bahaar gard-alud
khak udti hai us makan mein kya
 
ye mujhe chain kyun nahin padta
ek hi shakhs tha jahan mein kya

اپنا تبصرہ بھیجیں