Saans Lena Bhi Saza Lagta Hai

سانس لینا بھی سزا لگتا ہے
اب تو مرنا بھی روا لگتا ہے
کوہ غم پر سے جو دیکھوں تو مجھے
دشت آغوش فنا لگتا ہے
سر بازار ہے یاروں کی تلاش
جو گزرتا ہے خفا لگتا ہے
موسم گل میں سر شاخ گلاب
شعلہ بھڑکے تو بجا لگتا ہے
مسکراتا ہے جو اس عالم میں
بہ خدا مجھ کو خدا لگتا ہے
اتنا مانوس ہوں سناٹے سے
کوئی بولے تو برا لگتا ہے
ان سے مل کر بھی نہ کافور ہوا
درد یہ سب سے جدا لگتا ہے
نطق کا ساتھ نہیں دیتا ذہن
شکر کرتا ہوں گلہ لگتا ہے
اس قدر تند ہے رفتار حیات
وقت بھی رشتہ بپا لگتا ہے
Sans Lena Bhi Saza Lagta Hai
ab to marna bhi rawa lagta hai
 
koh-e-gham par se jo dekhun to mujhe
dasht aaghosh-e-fana lagta hai
 
sar-e-bazar hai yaron ki talash
jo guzarta hai khafa lagta hai
 
mausam-e-gul mein sar-e-shakh-e-gul
shoala bhadke to baja lagta hai
 
muskuraata hai jo is aalam mein
ba-khuda mujh ko khuda lagta hai
 
itna manus hun sannate se
koi bole to bura lagta hai
 
un se mil kar bhi na kafur hua
dard ye sab se juda lagta hai
 
nutq ka sath nahin deta zehn
shukr karta hun gila lagta hai
 
is qadar tund hai raftar-e-hayat
waqt bhi rishta-bapa lagta hai

اپنا تبصرہ بھیجیں