Tum Meri Aankh Ke Tewar Na Bhula Paaoge

نظم
تم مری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤ گے
ان کہی بات کو سمجھوگے تو یاد آؤں گا

ہم نے خوشیوں کی طرح دکھ بھی اکٹھے دیکھے
صفحۂ زیست کو پلٹو گے تو یاد آؤں گا

اس جدائی میں تم اندر سے بکھر جاؤ گے
کسی معذور کو دیکھو گے تو یاد آؤں گا

اسی انداز میں ہوتے تھے مخاطب مجھ سے
خط کسی اور کو لکھو گے تو یاد آؤں گا

میری خوشبو تمہیں کھولے گی گلابوں کی طرح
تم اگر خود سے نہ بولو گے تو یاد آؤں گا

آج تو محفل یاراں پہ ہو مغرور بہت
جب کبھی ٹوٹ کے بکھرو گے تو یاد آؤں گا
 
NAZAM
Tum Meri Aankh Ke Tewar Na Bhula Paaoge
Ankahi baat ko samjhoge toh yaad aaunga

Hum ne khushiyon tarah dukh bhi ikatthe dekhe
Safha-e zeest ko paltoge toh yaad aaunga

Iss judaai mein tum andar se bikhar jaaoge
Kisi mazoor ko dekhoge toh yaad aaunga

Issi andaaz mein hote the mukhaatib mujh se
Khat kisi aur ko likhoge toh yaad aaunga

Meri khushbu tumhen kholegi gulaabon ki tarah
Tum agar khud se na bologe toh yaad aaunga

Aaj toh mehfil-e yaaraan pe ho maghroor bahut
jab kabhi toot ke bikhroge toh yaad aaunga
 

اپنا تبصرہ بھیجیں