Aankh Bojhal Hai

نظم
آنکھ بوجھل ہے
مگر نیند نہیں آتی ہے
میری گردن میں حمائل تری بانہیں جو نہیں
کسی کروٹ بھی مجھے چین نہیں پڑتا ہے

سرد پڑتی ہوئی رات
مانگنے آئی ہے پھر مجھ سے
ترے نرم بدن کی گرمی
اور دریچوں سے جھجکتی ہوئی آہستہ ہوا
کھوجتی ہے مرے غم خانے میں
تیری سانسوں کی گلابی خوشبو!
میرا بستر ہی نہیں

دل بھی بہت خالی ہے
اک خلا ہے کہ مری روح میں دہشت کی طرح اترا ہے
تیرا ننھا سا وجود
کیسے اس نے مجھے بھر رکھا تھا

ترے ہوتے ہوئے دنیا سے تعلق کی ضرورت ہی نہ تھی
ساری وابستگیاں تجھ سے تھیں
تو مری سوچ بھی، تصویر بھی اور بولی بھی
میں تری ماں بھی، تری دوست بھی ہمجولی بھی

تیرے جانے پہ کھلا
لفظ ہی کوئی مجھے یاد نہیں
بات کرنا ہی مجھے بھول گیا!
تو مری روح کا حصہ تھا

مرے چاروں طرف
چاند کی طرح سے رقصاں تھا مگر
کس قدر جلد تری ہستی نے
مرے اطراف میں سورج کی جگہ لے لی ہے
اب ترے گرد میں رقصندہ ہوں!

وقت کا فیصلہ تھا
ترے فردا کی رفاقت کے لیے
میرا امروز اکیلا رہ جائے
مرے بچے، مرے لال
فرض تو مجھ کو نبھانا ہے مگر
دیکھ کہ کتنی اکیلی ہوں میں
Nazam
Aankh Bojhal Hai
Magar nind nahin aati hai
Meri gardan mein hamail teri banhen jo nahin
Kisi karwat bhi mujhe chain nahin padta hai

Sard padti hui raat
Mangne aai hai phir mujh se
Tere narm badan ki garmi
Aur darichon se jhijakti hui aahista hawa
Khojti hai mere gham-khane mein
Teri sanson ki gulabi khushbu
Mera bistar hi nahin

Dil bhi bahut khali hai
Ek khala hai ki meri ruh mein dahshat ki tarah utra hai
Tera nanha sa wajud
Kaise us ne mujhe bhar rakkha tha

Tere hote hue duniya se talluq ki zarurat hi na thi
Sari wabastagiyan tujh se thin
Tu meri soch bhi, taswir bhi aur boli bhi
Main teri man, bhi teri dost bhi ham-joli bhi

Tere jaane pe khula
Lafz hi koi mujhe yaad nahin
Baat karna hi mujhe bhul gaya
Tu meri ruh ka hissa tha

Mere chaaron taraf
Chand ki tarah se raqsan tha magar
Kis qadar jald teri hasti ne
Mere atraf mein suraj ki jagah le li hai
Ab tere gird main raqsinda hun

Waqt ka faisla tha
Tere farda ki rifaqat ke liye
Mera imroz akela rah jae
Mere bachche, mere lal
Farz to mujh ko nibhana hai magar
Dekh ki kitni akeli hun main

اپنا تبصرہ بھیجیں