Aankh Ki Khadkiyain Khuli Hun Gai

Aankh Ki Khadkiyain Khuli Hun Gai

Ghazal
Aankh Ki Khadkiyan Khuli Hon Gai
Dil mein jab choriyan hoi hun gai

Ya kahin aainay giray hun gay
Ya kahain ladkiyan hasi hun gai

Ya kahin din nikal raha hoga
Ya kahin bastiyan jali hun gai

Ya kahin hath hathkadi main qaid
Ya kahin chooriyan parhi hun gai

Ya kahin khamshi kia takribaat
Ya kahin ghantiyan baji hun gai

Laot ayin gay sheher se bhai
Hath mein rakhiyan bandhi hun gai

Un dino koi mar gaya ho ga
Jin dino shadiyain honi hungai

Aankh ki khadkiyan khuli hun gai
Dil mein jab choriyan hoi hun gai
غزل
آنکھ کی کھڑکیاں کھلی ہوں گی
دل میں جب چوریاں ہوئی ہوں گی

یا کہیں آئنے گرے ہوں گئے
یا کہیں لڑکیاں ہسی ہوں گی

یا کہیں دن نکل رہا ہوگا
یا کہیں بستیاں جلی ہوں گی

یا کہیں ہاتھ ہتھکڑی میں قید
یا کہیں چوڑیاں پڑی ہوں گی

یا کہیں خامشی کی تقریبات
یا کہیں گھنٹیاں بجی ہوں گی

لوٹ آئیں گئے شہر سے بھائی
ہاتھ میں رکھیاں بندہی ہوں گی

اُن دنوں کوئی مر گیا ہوگا
جن دنوں شادیاں ہونی ہوں گی

آنکھ کی کھڑکیاں کھلی ہوں گی
دل میں جب چوریاں ہوئی ہوں گی

اپنا تبصرہ بھیجیں