Tou Mere Zabt Se Dar Tu| Afkar Alvi poetry

Tou Mere Zabt Se Dar Tu| Afkar Alvi poetry

Tou Mere Zabt Se Dar Tu Nahi Geya Mere Dost
Keh aaj theek se lar bhi nahi saka mere dost

Tou aaj kon se dukh mein hai kya howa hai tujhe
Mein ro raha hoon tou hans bhi nahi raha mere dost

Woh mujh se pochh raha tha meri mohabbat ka
So mein ne bat badal kar kaha suna mere dost

Yeh bichho bhula kyun nah un se darte phairen
Keh jin se khauf zada ho ik ajdhaa mare dost

Jo bach gayi hai wo gharoon mein ja guzarin kahin
Yeh dour apne mutabiq nahi raha mere dost

Keh mein tou wehshi hoon mujh ko nah sonp mera wajood
Tou ja raha hai tou mujh ko jalata ja mere dost

Mein dushmanon ko hamesha dua se maarta hoon
Sabhi ki khair tumhara bhi ho bhala mere dost

Tou mere zabt se dar tou nahi geya mere dost
Keh aaj theek se lar bhi nahi saka mere dost
غزل
تو میرے ضبط سے ڈر تو نہیں گیا میرے دوست
کہ آج ٹھیک سے لڑ بھی نہیں سکا مرے دوست

تو آج کون سے دکھ میں ہے کیا ہوا ہے تجھے
میں رو رہا ہوں تُو ہنس بھی نہیں رہا مرے دوست

وہ مجھ سے پوچھ رہا تھا مری محبت کا
سو میں نے بات بدل کر کہا سنا مرے دوست

یہ بچھو بھلا کیوں نہ ان سے ڈرتے پھریں
کہ جن سے خوفزدہ ہو اک اژھا مرے دوست

جو بچ گئی ہے وہ غاروں میں جا گزاریں کہیں
یہ دور اپنے مطابق نہیں رہا مرے دوست

کہ میں تو و حشی ہوں مجھ کو نہ سونپ میرا وجود
تُو جا رہا ہے تو مجھ کو جلاتا جا مرے دوست

میں دشمنوں کو ہمیشہ دعا سے مارتا ہوں
سبھی کی خیر تمہارا بھی ہو بھلا مرے دوست

تو میرے ضبط سے ڈر تو نہیں گیا میرے دوست
کہ آج ٹھیک سے لڑ بھی نہیں سکا مرے دوست

اپنا تبصرہ بھیجیں