Tere Ird-Gird Wo Shor Tha Meri Baat Beech mein

Ghazal
Tere Ird-Gird Wo Shor Tha Meri Baat Beech mein Reh Gai
Na mein kah saka na to sun saka meri baat beech main reh gai

Teri khadkiyon pe jhokay howay kai phool thay humain dekhte
Teri chhat pe chand thir gaya meri baat beech mein reh gai

Meri zindagi mein jo log thay mere ass pass se uth gaye
Mein tou reh gaya unhain rokta meri baat beech mein reh gai

Mujhe wahem tha tere samne nahi khul sake gai zuban meri
So haqiiqatan bhi wohi howa meri baat beech main reh gai
غزل
تیرے ارد گرد وہ شورتھا میری بات بیچ میں رہے گئی
نہ میں کہہ سکا نہ تو سن سکا میری بات بیچ میں رہے گئی

تیری کھڑکیوں پہ جھکے ہوئے کئی ُپھول تھے ہمیں دیکھتے
تیری چھت پہ چاند ٹھر گیا میری بات بیچ میں رہے گئی

میری زندگی میں جو لوگ تھے میرے آس پاس سے اُٹھ گئے
میں تو رہے گیا اُنہیں روکتا میری بات بیچ میں رہے گئی

مجھے وہم تھا تیرے سامنے نہیں کُھل سکے گئی زباں میری
سو حقیقتََا بھی وہی ہوا میری بات بیچ میں رہے گئیe

اپنا تبصرہ بھیجیں