Sitaron Se Bhara Yeh Aasman Kaisa Lagay Ga

Sitaron Se Bhara Yeh Aasman Kaisa Lagay Ga

Sitaron Se Bhara Yeh Aasman Kaisa Lagay Ga
Hamare bad tum ko yeh jahaan kaisa lagay ga

Thakhy hary howay suraj ki bheegi roshni mein
Hawaon se ulajtha badbaan kaisa lagay ga

Jamay qadmon ke niche se phesalti jaye gi rait
Bikher jaye gi jab umer rawan kaisa lagay ga

Asi mitti mein mil jaye gi ponji umer bhar ki
Giray gi jis ghari deewar jaan kaisa lagay ga

Bahot utra rahe ho dil ki bazi jeetne per
Ziyaan bad az ziyaan bad az ziyaan kaisa lagay ga

Wo jis ke bad hogi musalsal be niazi
Ghari bhar ka wo shoro fughan kaisa lagay ga

Sitaroon se bhara yeh aasman kaisa lagay ga
Hamare bad tum ko ye jahaan kaisa lagay ga

Sitaron se bhara yeh aasman kaisa lagay ga
Hamare bad tum ko yeh jahaan kaisa lagay ga
غزل
ستاروں سے بھرا یہ آسماں کیسا لگے گا
ہمارے بعد تم کو یہ جہاں کیسا لگے گا

تھکے ہارے ہوئے سورج کی بھیگی روشنی میں
ہواؤں سے اُلجھتا بادباں کیسا لگے گا

جمے قدموں کے نیچے سے پھسلتی جائے گی ریت
بکھر جائے گی جب عمر رواں کیسا لگے گا

اسی مٹی میں مل جائے گی پونجی عمر بھر کی
گرے گی جس گھڑی دیوارِ جاں کیسا لگے گا

بہت اترا رہے ہو دل کی بازی جیتنے پر
زیاں بعد از زیاں بعد از زیاں کیسا لگے گا

وہ جس کے بعد ہوگی اک مسلسل بے نیازی
گھڑی بھر کا وہ شوروفغاں کیسا لگے گا

ستاروں سے بھرا یہ آسماں کیسا لگے گا
ہمارے بعد تم کویہ جہاں کیسا لگے گا

اپنا تبصرہ بھیجیں