Raat Ko Deep Ki Lo Kam Nahi Rakhi Jati

Ghazal :
Raat Ko Deep Ki Lou Kam Nahi Rakhi Jati
Dhond main roshni madham nahi rakhi jati
 
Kaise darya ki hifazat tere zeme theraou
Tujh se aik aankh agar nam nahi rakhi jati
 
Es liye chor kar jane lage sab chaara giraa’n
Zakham se izzat e marham nahi rakhi jati
 
Aise kaise main tujhe chahaane lag jaun bhalaa
Ghar ki bunyad to yaqdam nahi rakhi jat
 
Raat Ko Deep Ki Lo Kam Nahi Rakhi Jati
Dhond main roshni madham nahi rakhi jati
غزل
رات کو دیپ کی لو کم نہیں رکھی جاتی
دھند میں روشنی مدہم نہیں رکھی جاتی
 
کیسے دریا کی حفاظت تیرے زمے ٹھراؤں
تجھ سے اک آنکھ اگر نم نہیں رکھی جاتی
 
اس لیے چھوڑ کر جانے لگے سب چارہ گراں
زخم سے عزت مرہم نہیں رکھی جاتی
 
ایسے کیسے میں تجھے چاہنے لگ جاؤں بھلا
گھر کی بنیاد تو یکدم نہیں رکھی جاتی

اپنا تبصرہ بھیجیں