Naye Kapde Badal Kar Jaun Kahan

غزل
نئے کپڑے بدل کر جاؤں کہاں اور بال بناؤں کس کے لیے
وہ شخص تو شہر ہی چھوڑ گیا میں باہر جاؤں کس کے لیے
 
جس دھوپ کی دل میں ٹھنڈک تھی وہ دھوپ اسی کے ساتھ گئی
ان جلتی بلتی گلیوں میں اب خاک اڑاؤں کس کے لیے
 
وہ شہر میں تھا تو اس کے لیے اوروں سے بھی ملنا پڑتا تھا
اب ایسے ویسے لوگوں کے میں ناز اٹھاؤں کس کے لیے
 
اب شہر میں اس کا بدل ہی نہیں کوئی ویسا جان غزل ہی نہیں
ایوان غزل میں لفظوں کے گلدان سجاؤں کس کے لیے
 
مدت سے کوئی آیا نہ گیا سنسان پڑی ہے گھر کی فضا
ان خالی کمروں میں ناصرؔ اب شمع جلاؤں کس کے لیے
Ghazal
Naye Kapde Badal Kar Jaun Kahan Aur Baal Banaun Kis Ke Liye
Wo shakhs to shahr hi chhod gaya main bahar jaun kis ke liye
 
Jis dhup ki dil mein thandak thi wo dhup usi ke sath gai
In jalti balti galiyon mein ab khak udaun kis ke liye
 
Wo shahr mein tha to us ke liye auron se bhi milna padta tha
Ab aise-waise logon ke main naz uthaun kis ke liye
 
Ab shahr mein us ka badal hi nahin koi waisa jaan-e-ghazal hi nahin
Aiwan-e-ghazal mein lafzon ke gul-dan sajaun kis ke liye
 
Muddat se koi aaya na gaya sunsan padi hai ghar ki faza
In khali kamron mein ‘nasir’ ab shama jalaun kis ke liyeG

اپنا تبصرہ بھیجیں