Namkeen Hai Kahin To Kahin Be Namak Nami

Namkeen Hai Kahin To Kahin Be Namak Nami

Namkeen Hai Kahin To Kahin Be Namak Nami
Utri hoi hai mujh mein bari dour tak nami

Hota hai hijr paanch asansir peh mushtamil
Umeed, intezaar, udaasi , kasak , nami

Phir socha anqareeb tahi chasham ho nah jaon
Pehlay to mein lutata raha be dharak nami

Mujh mein chupay hunar ko kia gham ne yun aayan
Mitti peh gir ke jaisay ura de mehak nami

Sakin hain chup hain zard hain mein aur yeh pahar
Hum mein bas aik cheez nahi mushtarik nami

Takhleeq ke liye yeh fiza saz gaar hai
Halki phwaar, khamshi, khali sarak , nami

Girye ne yun bharay hain hamari jalan mein rang
Jaise kiran ko cho ke bana de dhanak nami

Namkeen hai kahin to kahin be namak nami
Utri hoi hai mujh mein bari dour tak nami
غزل
نمکین ہے کہیں تو کہیں بے نمک نمی
اُتری ہوئی ہے مجھ میں بڑی دور تک نمی

ہوتا ہے ہجر پانچ عناصر پہ مشتمل
امید، انتظار، اداسی، کسک، نمی

پھر سوچا عنقریب تہی چشم ہو نہ جاوں
پہلے تو میں لٹاتا رہا، بے دھڑک نمی

مجھ میں چھپے ہنر کو کیا غم نے یوں عیاں
مٹی پہ گر کے جیسے اُڑا دے مہک نمی

ساکن ہیں چپ ہیں زرد ہیں میں اور یہ پہاڑ
ہم میں بس ایک چیز نہیں مشترک نمی

تخلیق کے لئے یہ فضا سازگار ہے
ہلکی پھوار، خامشی، خالی سڑک ، نمی

گریے نے یوں بھرے ہیں ہماری جلن میں رنگ
جیسے کرن کو چھو کے بنا دے دھنک نمی

نمکین ہے کہیں تو کہیں بے نمک نمی
اُتری ہوئی ہے مجھ میں بڑی دور تک نمی
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں