Musalsal War Karne Par Bhi Zara Bhar Nahi Toota

Musalsal War Karne Par Bhi Zara Bhar Nahi Toota

Musalsal War Karne Par Bhi Zara Bhar Nahi Toota
Mein pathar ho gaya lekin tera khanjar nahi toota

Teray tukray meri khirki ke sheeshon se ziada hain
Naseeb acha hai mera tu mere andar nahi toota

Mujhe barbad karne tak hi us ke aastan toote
Mera dil tootne ke baad us ka ghar nahi toota

Tilisaam yar mein jab bhi kami aayi nami aayi
Un aankhon mein jinhin lagta tha jadugar nahi toota

Saron par aasman hathon se aainay nazar se dil
Bahut kuch toot sakta tha bahut kuch par nahi toota

Hum us ka gham bhala qismat peh kaise taal sakte hain
Hamre hath mein toota hai wo gir kar nahi toota

Tere bheje howay taishon ki dharen taiz theen hafi
Magar un se yeh koh-e-gham zyada tar nahi toota

Musalsal war karne par bhi zara bhar nahi toota
Mein pathar ho gaya lekin tera khanjar nahi toota
غزل
مسلسل وار کرنے پر بھی ذرہ بھر نہیں ٹوٹا
میں پتھر ہو گیا لیکن ترا خنجر نہیں ٹوٹا

ترے ٹکڑے مری کھڑکی کے شیشوں سے زیادہ ہیں
نصیب اچھا ہے میرا تو مرے اندر نہیں ٹوٹا

مجھے برباد کرنے تک ہی اُس کے آستاں ٹوٹے
مرا دل ٹوٹنے کے بعد اُس کا گھر نہیں ٹوٹا

طلسم ِ یار میں جب بھی کمی آئی، نمی آئی
اُن آنکھوں میں جنہیں لگتا تھا جادوگر نہیں ٹوٹا

سروں پر آسماں ہاتھوں سے آئینے نظر سے دل
بہت کچھ ٹوٹ سکتا تھا بہت کچھ پر نہیں ٹوٹا

ہم اُس کا غم بھلا قسمت پہ کیسے ٹال سکتے ہیں
ہمارے ہاتھ میں ٹوٹا ہے وہ گر کر نہیں ٹوٹا

تیرے بھیجے ہوئے تیشوں کی دھاریں تیز تھیں حافی
مگر ان سے یہ کوہ ِ غم زیادہ تر نہیں ٹوٹا

مسلسل وار کرنے پر بھی ذرہ بھر نہیں ٹوٹا
میں پتھر ہو گیا لیکن ترا خنجر نہیں ٹوٹا

اپنا تبصرہ بھیجیں