Baray Tahammul Se Rafta Rafta Nikalna Hai

Baray Tahammul Se Rafta Rafta Nikalna Hai

Baray Tahammul Se Rafta Rafta Nikalna Hai
Bacha hai tujh mein mere hissa nikalna hai

Yeh rooh barson se dafan hai tum madad karogay
Badan ke malbay se iss ko zindaa nikalna hai

Nazar mein rakhna kahin koi gham shanas gahak
Mujhe sukhan bechna hai kharcha nikalna hai

Nikal laya hoon aik pinjray se ik parinda
Ab iss parinday ke dil se pinjra nikalna hai

Yeh tees barson se kuch baras pechay chal rahi hai
Mujhe ghari ka kharab purzaa nikalna hai

Khayal hai khandaan ko itelaa de doon
Jo kat gaya uss shajar ka shajraa nikalna hai

Mein aik kirdaar se bara tang hoon qalam kaar
Mujhe kahani mein daal gussa nikalna hai

Baray tahammul se rafta rafta nikalna hai
Bacha hai tujh mein mere hissa nikalna hai
غزل
بڑے تحمل سے رفتہ رفتہ نکالنا ہے
بچا ہے تجھ میں میرا حصہ نکالنا ہے

یہ روح برسوں سے دفن ہے تم مدد کروگے
بدن کے ملبے سے اِس کو زندہ نکالنا ہے

نظر میں رکھنا کہیں کوئی غم شناس گاہک
مجھے سخن بیچنا ہے خرچہ نکالنا ہے

نکال لایا ہوں ایک پنجرے سے اک پرندہ
اب اِس پرندے کے دل سے پنجرہ نکالنا ہے

یہ تیس برسوں سے کچھ برس پیچھے چل رہی ہے
مجھے گھڑی کا خراب پرزہ نکالنا ہے

خیال ہے خاندان کو اطلاع دے دوں
جو کٹ گیا اُس شجر کا شجرہ نکالنا ہے

میں ایک کردار سے بڑا تنگ ہوں قلم کار
مجھے کہانی میں ڈال غصہ نکالنا ہے

بڑے تحمل سے رفتہ رفتہ نکالنا ہے
بچا ہے تجھ میں میرا حصہ نکالنا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں